الصحیح من سیرة النبی الاعظم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) جلد ۳

الصحیح من سیرة النبی الاعظم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)0%

الصحیح من سیرة النبی الاعظم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) مؤلف:
قسم: رسول اکرم(صلّی علیہ وآلہ وسلّم)
صفحے: 460

الصحیح من سیرة النبی الاعظم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)

یہ کتاب برقی شکل میں نشرہوئی ہے اور شبکہ الامامین الحسنین (علیہما السلام) کے گروہ علمی کی نگرانی میں اس کی فنی طورپرتصحیح اور تنظیم ہوئی ہے

مؤلف: حجت الاسلام والمسلمین سید جعفرمرتضی عاملی
قسم: صفحے: 460
مشاہدے: 4956
ڈاؤن لوڈ، اتارنا: 552

تبصرے:

جلد 3
کتاب کے اندر تلاش کریں
  • شروع
  • پچھلا
  • 460 /
  • آگے
  • آخر
  •  
  • ڈاؤن لوڈ، اتارنا HTML
  • ڈاؤن لوڈ، اتارنا Word
  • ڈاؤن لوڈ، اتارنا PDF
  • مشاہدے: 4956 / ڈاؤن لوڈ، اتارنا: 552
سائز سائز سائز
الصحیح من سیرة النبی الاعظم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)

الصحیح من سیرة النبی الاعظم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) جلد 3

مؤلف:
اردو

یہ کتاب برقی شکل میں نشرہوئی ہے اور شبکہ الامامین الحسنین (علیہما السلام) کے گروہ علمی کی نگرانی میں اس کی فنی طورپرتصحیح اور تنظیم ہوئی ہے

۱

۲

الصحیح من سیرة النبی الاعظمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم

تیسری جلد

مؤلف: جناب حجة الاسلام والمسلمین سید جعفر مرتضی عاملی (ادام اللہ توفیقاتہ)

مترجم: معارف اسلام پبلشرز

۳

نام کتاب: الصحیح من سیرة النبی الاعظمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم

مؤلف: علامہ محقق جناب حجة الاسلام والمسلمین سید جعفر مرتضی عاملی (ادام اللہ توفیقاتہ)

مترجم: معارف اسلام پبلشرز

ناشر: نور مطاف

جلد: تیسری

اشاعت: اول

تاریخ اشاعت: ربیع الاول۱۴۲۷ھ _ق

۴

بسم الله الرحمن الرحیم

و صلی الله علی محمد و آله الطاهرین و لعنة الله علی اعدائهم اجمعین

و لکم فی رسول الله اسوة حسنة

مقدمہ:

بہترین اور کامل ترین طرز زندگی، باعث تخلیق کائنات ہستیوں کی پیروی میں مضمر ہے_ اور ان ہستیوں میں بھی رسول اکرم حضرت محمد مصطفیصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی سیرت طیبہ سب سے درخشان اور نمایاں ہے کہ پیروی کے لئے ان سے بہتر کوئی اور شخصیت ملی ہی نہیں سکتی_

یہ کتاب '' الصحیح من سیرة النبی الاعظم'' عظیم محقق ،حجت الاسلام والمسلمین علامہ سید جعفر مرتضی عاملی (ادام اللہ توفیقاتہ ) کی قیمتی ، گراں بہا، نہایت سودمند اور بے مثال کاوش ہے جس میں انہوں نے سیرت نبویصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کے تقریباً تمام پہلوؤں پر گہری اور منصفانہ تحقیق کرکے رسولصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کریم کی قابل فخر حیات طیبہ کے بہت سے پہلوؤں کو متعصبانہ، مغرضانہ اور ناپختہ سیرت نگاری کے گھٹا ٹوپ اندھیروں سے نکال کر منصفانہ تحقیق کے روشن افق پر لاکھڑا کیا اور حقیقت پسند علماء و محققین کو خوشگوار حیرت میں مبتلا کرکے ان سے داد تحسین وصول کی ہے اور دنیائے اسلام کی علمی محافل کی بھی بھر پور توجہ حاصل کی ہے_

۵

معارف اسلام پبلشرز خداوند متعال کا نہایت شکرگزار ہے کہ وہ اپنے اصلی فریضے _ یعنی اردو زبان جاننے والوں کی ضروریات کے مطابق اخلاق، عقائد، فقہ، تفسیر، تاریخ اور سیرت جیسے اہم اور ضروری موضوعات پر مختلف کتابوں کے ترجمہ اور نشر و اشاعت کے فرائض_ کو انجام دیتے ہوئے اللہ تعالی کی توفیق سے '' الصحیح من سیرة النبیصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم الاعظم'' کی تیسری جلد کو اس سال میں کہ جسے راہبرمعظم انقلاب حضرت آیت اللہ خامنہ ای (مدظلہ) نے رسول اعظم حضرت محمدصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کا سال قرار دیا ہے، اہل مطالعہ و تحقیق اور حق کے متلاشی حضرات کی خدمت میں پیش کررہاہے_ امید ہے کہ یہ کوشش خداوند متعال کی بارگاہ میں اور ولی خدا امام زمانہ حضرت مہدی حجت ابن الحسن العسکری (عج) کے نزدیک مقبول قرار پائے گی_

آخر میں اس نکتہ کا ذکر بھی فائدے سے خالی نہیں ہے کہ یہ ترجمہ عربی متن کے جدید ترین ایڈیشن سے بالکل مطابقت رکھتاہے_ اور اس کے مطالب و موضوعات کی ترتیب میں جو تبدیلیاں ہوئی ہیں اور منابع کی تکمیل کی گئی ہے، ان سب کا اس ترجمہ میں مکمل خیال رکھا گیا ہے _ لہذا معارف اسلام پبلشرز اس کتاب کا ترجمہ، تصحیح، نظر ثانی اورخاص کر جدید ایڈیشن سے مطابقت والے طاقت فرسا کام انجام دینے والی محترم فاضل شخصیات کا بھی نہایت شکرگزا رہے اور خداوند عالم سے ان کے لئے مزید توفیقات کا طالب ہے _

و آخر دعوانا ان الحمدلله رب العالمین

معارف اسلام پبلشرز

۶

پانچواں باب

ہجرت سے بدر تک

۷

پہلی فصل : رسول اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم مدینہ میں

دوسری فصل : غیر جنگی حوادث و واقعات

تیسری فصل : ابتدائے ہجرت میں بعض اساسی کام

چوتھی فصل: شرعی احکام

پانچویں فصل :اسلام میں جہاد کی اہمیت

چھٹی فصل : جنگ بدرسے پہلے کی لڑائیاں

۸

پہلی فصل :

رسول اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم مدینہ میں

۹

رسول اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی مدینہ میں تشریف آوری :

قباء کے مقام پر پندرہ(۱) دن قیام کے بعد نبی اکرم صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم مدینہ کی طرف روانہ ہوئے ، مکہ سے آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی روانگی اور قبانیز مدینہ پہنچنے کی تواریخ کے بارے میں مؤرخین کے درمیان شدید اختلاف پایا جاتاہے، البتہ اس بات پر سب متفق ہیں کہ ربیع الاول کے ابتدائی ایام میں آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم مدینہ میں داخل ہوئے(۲) _

علامہ مجلسی کی تحقیق کے مطابق آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم یکم ربیع الاول بروز پیرہجرت کے لئے مکہ سے روانہ ہوئے اور بارہ ربیع الاول بروز جمعہ مدینہ پہنچے_ شیخ مفید کا بھی یہی نظریہ ہے اور بعض نے اس پر اجماع کا دعوی بھی کیا ہے_(۳)

ایک روایت میں ہے کہ آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم سورج نکلنے سے پہلے مدینہ پہنچے، اس وقت حضرت ابوبکر اور آنحضرتصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم ایک جیسے سفید لباس میں ملبوس تھے جس کی وجہ سے لوگ غلطی سے رسول اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کا گمان کرتے ہوئے حضرت ابوبکر کو سلام کرتے رہے ، جب سورج نکل آیا اور آنحضرتصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم پر دھوپ پڑنے لگی تو حضرت ابوبکر نے آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم پر سایہ بنایا تو اس وقت لوگوں نے آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کو پہچانا_(۴)

____________________

۱) البحارج ۱۹ ص ۱۰۶ از اعلام الوری ، السیرة الحلبیة ج۲ص۵۵ ، صحیح مسلم کی روایت کے مطابق آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم نے قبا ء میں چودہ دن قیام فرمایا ، ان کے علاوہ اور بھی کچھ اقوال موجود ھیں_

۲ )ملاحظہ ہو: بحار الانوار ج ۵۸ ص ۳۶۶ ، المواہب اللدنیہ ج ۱ ص ۶۷ اور تاریخ الخمیس ج۱ ص ۳۳۷_

۳)اس دعوی کے دلائل ملاحظہ ہوں : بحار الانوار ج۸ ص ۳۶۶ و ۳۶۷_

۴)تاریخ الخمیس ج۱ ص ۳۳۷ _ نیز مندرجہ ذیل منابع میں بھی اس واقعہ کا اشارہ ملتاہے; سیرہ حلبیہ ج۲ ص ۵۲ ، دلائل النبوة بیہقی ج۲ ص ۴۹۸ و ۴۹۹ ، البدایہ والنہایہ ج۳ ص ۱۸۶ نیز ملاحظہ ہو السیرة النبویہ ابن ہشام ج۲ ص ۱۳۷_

۱۰

البتہ مذکورہ بالا روایت قطعاً صحیح نہیں ، اس لئے کہ نبی اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم بہت سے مؤرخین کی تصریح کے مطابق تپتی دوپہر میں مدینہ پہنچے تھے _(۱) اگر کہا جائے کہ ان روایات سے مراد شاید یہ ہو کہ مکہ سے آتے ہوئے جب آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم سیدھے مدینہ پہنچے تو اس وقت دوپہر کا وقت تھا جس کے (فوراً) بعد آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم قبا کی طرف روانہ ہوئے تو اس کا جواب پہلے گزر چکا ہے کہ اہل مدینہ ہر روز گروہ در گروہ قبا آتے تھے اور آنحضرتصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی خدمت میں سلام عرض کرتے تھے جس کا مطلب یہ ہے کہ آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم مدینہ والوں کے نزدیک ایک جانی پہچانی شخصیت تھے _ پس یہ دعوی کیسے کیا جاسکتا ہے کہ انہوں نے ابوبکر کو نبی کریمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم سمجھ لیا ؟ یہانتک کہ ابوبکر نے آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم پر سایہ کیا تب انہیں پتہ چلا_ اس سے صرف نظر ، خود نبی اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی شخصیت ہی آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی پہچان کیلئے کافی تھی ، آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی شخصیت حضرت ابوبکر سے بہت زیادہ مختلف تھی_ چنانچہ جب ام معبد نے اپنے شوہر کے سامنے آنحضرتصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی صفات ذکر کیں تو اس نے فوراً آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کو پہچان لیا(۲) جبکہ حضرت ابوبکر کی صفات ان کی بی-ٹی حضرت عائشہ کی زبانی پہلے گزرچکی ہیں، علاوہ ازایں گزشتہ روایات میں گزرچکاہے کہ آنحضرتصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم نے مدینہ جاتے ہوئے راستے میں نماز جمعہ ادا کی تھی(۳) اس سے معلوم ہوتاہے کہ آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم ظہر کے کچھ دیر بعد مدینہ میں داخل ہوئے کیونکہ مدینہ اور قبا کے درمیان کچھ زیادہ فاصلہ نہیں ہے _ اس پر مزید یہ کہ آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم ، ابوبکر سے دو سال بڑے بھی تھے _ پس ابوبکر سے ان لوگوں کا یہ پوچھنا کہ یہ لڑکا آپ کے ساتھ کون ہے ؟(۴) یہ کیا معنی رکھتاہے اور کیا ترپن سالہ بزرگ کو بچہ کہا جاتاہے؟ مگر یہ کہا جائے کہ ''غلام'' کا لفظ لڑکے اور بزرگ دونوں کے لئے یکساں طور پر استعمال ہوتاہے_ لیکن یہ سوال پھر بھی اپنی جگہ پر باقی رہتاہے کہ جب انہیں آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی ہجرت کا علم تھا تو ابوبکر سے آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کے متعلق پوچھنے کی کیا تک بنتی ہے ؟ جبکہ سینکڑوں لوگ آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کے استقبال کے لئے شہر سے باہر بھی

____________________

۱) تاریخ الخمیس ج۱/ص۳۳۷ ، ۳۳۶ و السیرة النبویہ ابن ہشام ج۲ ص ۱۳۷ ، صحیح بخاری مطبوعہ سنہ ۱۳۰۹ ج۲ ص ۲۱۳ و سیرہ حلبیہ ج۲ ص ۵۲_

۲)تاریخ الخمیس ج۱ ص ۳۳۴ و ص ۳۳۵ ، سیرہ ، سیرہ حلبیہ ج۲ ص ۹۴ و ۵۰ ، دلائل النبوة ج۱ ص ۲۷۹_

۳) المواہب اللدنیہ ج ۱ ص ۶۷ ، سیرہ ابن ہشام ج۲ ص ۱۳۹ ، تاریخ الخمیس ج۱ ص ۳۳۹ ، بحارالانوار ج۸ ص ۳۶۷ نیز دلائل النبوة ج۲ ص ۵۰۰_

۴)الغدیر ج۷ ص ۲۵۸ کثیر منابع سے ، نیز سیرہ حلبیہ ج۲ ص ۴۱ و مسند احمد ج۳ ص ۲۸۷_

۱۱

نکل آئے تھے_

رسول اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کا مدینہ میں قیام :

آپ ، بروز جمعہ اپنی سواری پر بیٹھ کر مدینہ کی طرف روانہ ہوئے _ علی علیہ السلام آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کے ہمراہ تھے جو آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی سواری کے ساتھ ساتھ چل رہے تھے، آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم انصار کے قبائل میں سے جس قبیلے کے پاس سے بھی گزر تے تھے وہ آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی تعظیم میں کھڑے ہوجاتے اور آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی خدمت میں اپنے ہاں ٹھہرنے کی درخواست کرتے ، آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم ان کے جواب میں فرماتے تھے: ''اونٹنی کا راستہ چھوڑ دو ، یہ خود ہی اس کام پر مامور ہے''_

آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم نے اونٹنی کی مہار ڈھیلی چھوڑ رکھی تھی ، یہاں تک کہ وہ چلتے چلتے مسجد النبیصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی جگہ پر پہنچی اور وہیں رک کر بیٹھ گئی ، یہ جگہ ابو ایوب انصاری کے گھر کے قریب تھی جو مدینہ کے فقیرترین شخص تھے(۱) پس ابوایوب یا انکی والدہ وہاں آئے اور آنحضرتصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کا سامان اٹھاکر اپنے گھر لے گئے ، یوں رسول اللہصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم ان کے ہاں قیام پذیر ہوئے جبکہ علیعليه‌السلام بھی آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کے ساتھ تھے اور مسجد اور اپنے گھروں کی تعمیر تک آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم وہیں مقیم رہے(۲) کہا گیا ہے کہ آنحضرتصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم نے تقریباً ایک سال تک ابو ایوب کے ہاں قیام فرمایا ، جبکہ ایک دوسرے قول کے مطابق سات ماہ اور تیسرے کے بقول صرف ایک ماہ وہاں قیام پذیر رہے(۳) ہمارے نزدیک یہ آخری قول حقیقت کے زیادہ قریب ہے ، کیونکہ بعید ہے کہ تعمیر کا کام اتنی طویل مدت تک جاری رہا ہو حالانکہ مہاجرین و انصار اپنی پوری کوشش اور توانائی سے اس کام میں مصروف تھے جبکہ رسول اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم خود بھی ان کے ساتھ اس کام میں شریک رہے(۴) _

____________________

۱) البحار ج۱۹ص ۱۲۱ ، مناقب ابن شھر آشوب ج۱ص ۱۸۵ _

۲) روضة الکافی ص ۳۴۰ _ ۳۳۹ ، البحارج ۱۹ص ۱۱۶ _

۳) البدء و التاریخ ج۴ ص ۱۷۸ ، وفاء الوفاء ج ۱ص ۲۶۵ ، السیرة الحلبیة ج۲ص ۶۴_

۴) السیرة الحلبیة ج۲ص۶۴ _

۱۲

ابن سلام کا قبول اسلام :

مکتب اہل بیتعليه‌السلام سے ناواقف تاریخ اور سیرت نگارکہتے ہیں کہ جب عبداللہ بن سلام نامی یہودی نے رسول اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کے مدینہ میں داخل ہوتے وقت لوگوں کے شور و غل کو سنا تو تیزی سے آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کے پاس آیا ، آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کو دیکھنے اور آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی باتیں سننے کے بعد اسے یقین ہوگیا کہ یہ(نورانی ) چہرہ جھوٹ بولنے والا نہیں ہوسکتا(۱) _

یہ بھی کہا گیا ہے کہ اس نے آنحضرتصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم سے تین ایسے سوال پوچھے جنہیں نبی کے علاوہ کوئی نہیں جانتا تھا پس آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم نے ان کا صحیح جواب دیا تو وہ اسلام لے آیا اور آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی خدمت میں عرض کی : '' اس سے پہلے کہ یہودیوں کو میرے اسلام کا علم ہو، آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم ان سے میرے متعلق پوچھیں'' رسول اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم نے یہودیوں سے اس کے بارے میں پوچھا تو انہوں نے جواب دیا : '' ہم سب سے اچھا شخص ہے اور سب سے اچھے شخص کا بیٹا ہے ، وہ خود بھی ہم سے افضل ہے اور ہم میں سے افضل ترین شخص کا بیٹا ہے'' _اسکے بعدجب یہودیوں کو اس کے اسلام کا علم ہوا تو کہنے لگے _ '' شرنا و ابن شرنا '' وہ خود بھی ہم میں سے بدترین شخص ہے اور بدترین شخص کا بیٹا ہے(۲) _

کہاگیا ہے کہ عبداللہ بن سلام ہی وہ شخص ہے جسکے بارے میںیہ آیت نازل ہوئی:

( شهد شاهد من بنی اسرائیل علی مثله فآمن واستکبرتم ) (احقاف۱۰)

بنی اسرائیل کا ایک گواہ ایسی ہی بات کی گواہی دے چکاہے جبکہ وہ ایمان لایا اور تم نے پھر بھی تکبر کیا_(۳)

____________________

۱) الاصابةج۲ص۳۲۰، الاستیعاب ج۲ ص ۳۸۲ ، مستدرک الحاکم ج۳ص۱۳ ، تلخیص مستدرک ذہبی ج ۳ص ۱۳_

۲) البخاری حاشیہ فتح الباری ج۷ص۲۱۳،۲۱۲( خود ابن سلام سے روایت) الاصابہ ج۲ ص۳۲۱ ، الاستیعاب (حاشیہ الاصابة )ج ۲ ص ۳۸۲ _

۳) اسد الغابة فی معرفة الصحابة ص۳ ج ۱۷۶، صحیح بخاری حاشیہ فتح الباری ج۷ ص ۹۷، الاستیعاب حاشیہ الاصابہ ج ۲ص۳۸۳ ، الدرالمنثورج ۴ص۶۹ ، روایت ابویعلی،ابن جریر، حاکم، مسلم ، نسائی ، ابن المنذر ، ابن مردویة ، ترمذی ، ابی حاتم ، ابن عساکر وعبد بن حمید_

۱۳

نیز درج ذیل آیت بھی اس کے بارے میں ہی نازل ہوئی _

( قل کفی بالله شهیداً بینی و بینکم ومن عنده علم الکتاب ) (نبی اسرائیل ۹۶)

کہہ دیجئے میرے اور تمہارے درمیان اللہ اور وہ گواہ کافی ہے جسکے پاس کتاب کا علم ہے(۱) _

اس کے علاوہ اور بھی کئی آیات اس کے بارے میں ذکر کی جاتی ہیں، جنہیں یہاں ذکر کرنے کی گنجائشے نہیں، مذکورہ بالا روایات کے بارے میں درج ذیل امور توجہ طلب ہیں_

اول: اہل تحقیق حضرات جانتے ہیں کہ ابن سلام کے اسلام لانے کے بارے میں روایات کے درمیان واضح تناقض اور تضاد پایا جاتا ہے کیونکہ بعض مؤرخین کے مطابق اس نے ہجرت کے آٹھویں سال اسلام قبول کیا ، قیس بن ربیع نے عاصم اور اس نے شعبی سے نقل کیاہے کہ عبداللہ بن سلام نے رسول اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی وفات سے دو سال پہلے اسلام قبول کیا(۲) عسقلانی نے اس روایت کی سند میں قیس بن ربیع نامی راوی کی وجہ سے اسے ضعیف اور غلط قرار دیتے ہوئے ردکردیا ہے(۳) _

لیکن ہم سمجھتے ہیں کہ اس روایت کو رد کرنے کی اس کی دلیل وہ گذشتہ روایات ہیں جن کے مطابق عبداللہ بن سلام ابتدائے ہجرت میں اسلام لے آیا تھا جبکہ ہم اس کی یہ بات قبول نہیں کرسکتے اس لئے کہ شعبی کا زمانہ عسقلانی کی نسبت نزدیک تر ہے اور اس نے عبداللہ بن سلام کے اسلام قبول کرنے کے سال کو اسطرح دقت کے ساتھ مشخص و معین کیا ہے جس سے واضح ہوتاہے کہ اس نے بے پرکی نہیں اڑائی ہے_

اسی طرح اگر ابن سلام اتنی ہی باعظمت شخصیت کا حامل تھا تو کیا وجہ ہے کہ ہجرت کے بعد آٹھ سال کے طویل عرصے میں اس کی کوئی بات یا کوئی مشورہ ہمارے لئے نقل نہیں ہوا جبکہ تاریخ نے ایسے کم عمر صحابہ کی

____________________

۱) الاصابة ج۲ص۳۲۱ ، الاستیعاب ج۲ ص۳۸۳ ، الدرالمنثور ج۴ ص ۶۹ ، روایت از ابن مردویہ ، ابن جریر ، ابن ابی شیبہ ، ابن سعد ابن منذر_

۲) الاصابة ج۲ ص ۳۲۰_

۳) الاصابة ج۲ ص ۳۲۰ ، فتح الباری ج۷ص۹۷_

۱۴

باتیں اور ان کے کردار کو ہمارے لئے محفوظ رکھاہے کہ جنہیں ایام طفولیت میں نبی اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی زیارت کا شرف حاصل ہوا ، پس کیا وجہ ہے کہ تاریخ نے (بقول ان کے ) ایسے عظیم شخص کے بارے میں سکوت اختیار کیا ہے_

اسی طرح عسقلانی کا قیس بن ربیع کو ضعیف قرار دینا بھی نامناسب ہے اس لئے کہ خود عسقلانی نے عفان بن قیس ، الثوری ، شعبہ ، ابوالولید اور ابن عدی سے قیس کی وثاقت کو نقل کیا ہے نیز یعقوب بن ابی شیبہ ، عثمان بن ابی شیبہ، ابو حاتم، شریک، ابن حبان ،العجلی، ابوحصین ، یحیی بن سعید، معاذ بن معاذ، ابن عینیہ اور ابونعیم و غیرہ نے قیس کی تعریف کی ہے(۱) _

عسقلانی و غیرہ کے قیس پر الزامات کا رازوہی ہے جس کی طرف احمدنے اشارہ کیا ہے، کیونکہ وہ ایک جگہ لکھتاہے: '' وہ (قیس) شیعہ تھا اورحدیث میںغلطی کیاکرتا تھا''(۲) _ جی ہاں اس سے منقول احادیث میں جرح کا یہی راز ہے اگر چہ اس کے باوجود وہ کہتے ہیں کہ اس کی اکثر روایات درست ہیں(۳) قیس پر اس طرح کی الزام تراشی کرنے والی شخصیت احمد بن حنبل ہے ، اوراس سے یہ بات کوئی عجیب نہیں اس لئے کہ یہ وہی ہے جو متوکل ناصبی کے زمانے میںتھا اور اس ناصبی متوکل نے ابن سکیت کے ساتھ وہ سلوک کیا جو سب کو معلوم ہے کہ اس نے حکم دیا تھا کہ اس کی زبان گدی سے کھینچ لی جائے اور اسی فعل کے نتیجہ میں اس کا انتقال ہوگیا تھا اور اس کی وجہ یہ تھی کہ ابن سکیت نے متوکل کے دو بیٹوں کو امام حسن اور امام حسین علیھما السلام سے افضل و برتر قرار دینے سے انکار کیا تھا(۴) ،متوکل وہی تو ہے جس نے اپنے ہی بیٹے منتصر ( جواپنے باپ سے امیر المؤمنین علیعليه‌السلام کی کسر شان کرنے پر ناراض رہتا تھا) کو کچو کے لگانے کے لئے اپنی لونڈی کو یہ گانے کا حکم دیتا تھا _

غار الفتی لابن عمّه راس الفتی فی حرّامّه (۵)

____________________

۱) تہذیب التھذیب ج ۸ص۳۹۵ ، ۳۹۲ _

۲) تہذیب التھذیب ج۲ص۳۹۴_

۳) تھذیب التھذیب ، ترجمة قیس ج ۸_

۴)الکنی و الالقاب ج۱ ص ۳۱۴ تا ۳۱۵ ، نیز ملاحظہ ہو: وفیات الاعیان ج۶ ص ۳۹۵ ، ۳۹۶ ، ۴۰۰ و ۴۰۱ و تاریخ الخلفاء ص ۳۴۸_

۵)الکامل ابن اثیر ج۷ ص ۵۵_

۱۵

متوکل وہی شخص ہے جو علی علیہ السلام کی فضیلت میں ایک روایت نقل کرنے والے کو ایک ہزار تازیانے لگایا کرتا تھا،اور اسی نے حضرت امام حسینعليه‌السلام کے روضہ اطہر پر ہل چلوا دیا تھا اور وہ لوگوں کو آپعليه‌السلام کے روضہ اطہر کی زیارت سے روکتا تھا(۱) _ اسی متوکل کے دربار میں احمد بن حنبل کو وہ عظیم مقام حاصل تھا کہ اسے متوکل نے اپنے بیٹے معتز، دیگر بیٹوں ، شہزادوں اور ولی عہدوں کا اتالیق مقرر کیا ہوا تھا(۲) اور ابن کثیر کے بقول متوکل اس کے مشورے کے بغیر نہ تو کسی کو عزل کرتا اور نہ ہی کسی عہدہ پر کسی کو منصوب کرتا تھا_(۳) ہم سؤال کرتے ہیں کہ اے اہل بصیرت کس وجہ سے متوکل کے دربار میں احمد بن حنبل اس قدر عظیم منزلت و عظمت کا مستحق قرار پایا، اس بارے میں آپ کتاب ''بحوث مع اہل السنة والسلفیة ''کی طرف رجوع کریں تا کہ اہل حدیث اور حنابلہ کی ناصبیت کے کچھ شواہد آپ پر واضح ہوجائیں _

دوم: رہا آیت مجیدہ( و شهد شاهد من بنی اسرائیل ) کا مسئلہ تو اس سلسلے میں ہم درج ذیل امور کی طرف اشارہ کرتے ہیں_

ا لف: عکرمہ کہتاہے : یہ آیت عبداللہ بن سلام کے بارے میں نازل نہیں ہوئی ، اور اس آیت کا نزول مکہ میں ہوا ، آیت سے مراد یہ ہے کہ بنی اسرائیل میں سے جو شخص (قرآن پر)ایمان لایاوہ اس شخص کی مانند ہے جو رسول اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم پر ایمان لے آئے اور اسی طرح کی بات مسروق بھی قسم کھاکر بیان کرتاہے_ شعبی بھی یہی کہتاہے اور عکرمہ ہی کی دلیل کو مدنظر رکھتے ہوئے ابوعمر نے بھی اس آیت کا (عبداللہ بن سلام کے متعلق ہونے کا ) انکار کیا ہے(۳) _ ابن سلام والی روایت پراعتماد کرتے ہوئے اس آیت کو مدنی قرار دینا کسی طرح بھی قابل توجیہ نہیں کیونکہ ایسے ایسے مذکورہ اشخاص اس کا انکارکررہے ہیں جو زمانہ نبوت کے قریب تھے جبکہ شعبی و غیرہ نے بھی اس کے خلاف تصریح کی ہے(جسے ہم بعد میں ذکر کریں گے)_

____________________

۱)الکامل ابن اثیر ج۷ ص ۵۵_

۲)مناقب امام احمد بن حنبل ابن جوزی ص ۳۸۵ و ۳۶۴ ، احمد بن حنبل والمحنہ ص ۱۹۰ و حلیة الاولیاء ج۹ ص۲۰۹ _

۳)البدایة والنہایہ ج۱۰ ص ۳۱۶ _

۴) الاستیعاب حاشیہ الاصابةج۲ص۳۸۳ ، فتح الباری ج۷ص۹۸،درالمنثورج۶ص۳۹ ،ابن جریر، عبد بن حمید، ابن ابی حاتم، ابن المنذر روایا ت سے منقول ہیں _

۱۶

ب: بعض روایات کے مطابق یہ آیت میمون بن بنیامین کی شان میں نازل ہوئی ، اس کا قصہ بھی ابن سلام کے قصے کی مانند نقل کیا گیا ہے(۱) اورزہری ، مجاہد، ابن عمر ، سعید بن جبیر ، عمر اور قتادہ سے اس سے مختلف واقعات منقول ہیں(۲) _

ج: شعبی سے منقول ہے کہ اس نے کہا :'' عبداللہ کے متعلق قرآن مجید میں کوئی آیت نازل نہیں ہوئی''(۳) _

د: ظاہری طور پر مذکورہ آیت میں ان مشرکین کو خطاب کیاگیا ہے جنہوں نے اس سمے تکبر کیا جب ان کی باتوں پر اندھا اعتماد کرنے والے بعض بنی اسرائیل بھی آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌ پر ایمان لے آئے اور یہ ممکن نہیں کہ اس آیت میں یہودیوں کو مخاطب کیا گیا ہو، کیونکہ خود یہود بھی بنی اسرائیل میں سے ہیں ، اور اس بات سے عکرمہ ، شعبی اور مسروق و غیرہ کے گزشتہ قول کی بھی تائید ہوتی ہے_

ھ : طحاوی نے واضح طور پر لکھا ہے کہ ابن سلام کی شان میں اس آیت کے نزول کے بارے میں رسول اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم نے کوئی تصریح نہیں فرمائی اور اس بات کو مالک نے ( اپنی طرف سے) استنباط کیا ہے(۴) _

سوم: آیت مجیدہ :( و من عنده علم الکتاب ) کے بارے میں ہم درج ذیل امور کی طرف اشارہ کرتے ہیں_

۱_ مذکورہ آیت کے ضمن جو قول بیان کیا گیا ہے اس کی مخالفت میں زہری ، مجاہد، سعید بن جبیر، ابن عمر، قتادہ اور عمر و غیرہ سے منقول روایات موجود ہیں، اور مذکورہ قول جندب،ابن عباس اورمجاہدسے منقول دو روایتوں میں سے صرف ایک میں ذکر ہوا ہے_

____________________

۱) الدرالمنثورج ۶ص۴۰ ، (عبد بن حمید مکی ) ، فتح الباری ج ۷ص۹۸ نیز الاصابہ ج۳ ص ۴۷۱_

۲) الدرالمنثور ج ۴ص۶۹ ، مشکل الآثارج۱ص ۱۳۷_

۳) مشکل الآثار ج۱ص۱۳۷ اس روایت کے مطابق ابن سلام کی شان میں کوئی آیت نازل نہ ہونے کے بارے میں سعید بن جبیر نے بھی شعبی کی تائید کی ہے، الدرالمنثورج ۴ص۶۹ ، و ج۶ص۳۹ ، ۴۰ ، ابن منذر سے روایت ، دلائل الصدق ج۲ص۱۳۵ ، المیزان ج۱۱ص۳۸۹_

۴) مشکل الآثار ج۱ص ۱۳۹_

۱۷

۲ :شعبی کا بھی قول پہلے گزرچکاہے کہ ابن سلام کی شان میں قرآن مجید کی کوئی آیت نازل نہیں ہوئی_

۳: اسی طرح عکرمہ، حسن ،شعبی ، محمد بن سیرین اور سعید بن جبیر میں سے ہر ایک نے ابن سلام کی شان میں اس آیت کے نازل ہونے سے متعلق قول کو رد کیا ہے اور یہ دلیل پیش کی ہے کہ یہ سورت مکی ہے اور ابن سلام اس کے بعد اسلام لایا تھا(۱) _

۴: مورخین کا کہنا ہے کہ حضرت عمر بن خطاب نے اس آیت کے نزول کے بعد اسلام قبول کیا _ انہوں نے رسول اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کو حالت نماز میں اس آیت کو دوسری آیات کے ساتھ تلاوت کرتے ہوئے سنا تو وہیں رک کر آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کی نماز ختم ہونے کا انتظارکرنے لگے، جب آنحضرتصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم نے سلام پھیرا تو وہ تیزی سے آگے بڑھے اور اسلام لے آئے(۲) اور واضح ہے کہ عمر مکہ میں اسلام لایا تھا_

۵: ایسی بہت سی متواتر روایات موجود ہیں جن میں صراحت کے ساتھ کہا گیا ہے کہ( و من عنده علم الکتاب ) سے مراد امیر المؤمنین علی علیہ السلام کی ذات بابرکت ہے جو قرآن مجید کی تفسیر، تاویل ، ناسخ و منسوخ اور حرام و حلال و غیرہ کا علم رکھتے ہیں، یہ روایت ابوسعید خدری ، ابن عباس ، محمد بن حنفیہ ، امام محمد باقرعليه‌السلام ، سدی ، زید بن علیعليه‌السلام ،امام موسیعليه‌السلام بن جعفرعليه‌السلام اور ابوصالح سے منقول ہے(۳) _ اس آیت کے بارے میں ابوصالح کاقول مضحکہ خیزہے _وہ کہتاہے: ''ومن عندہ علم الکتاب'' سے مراد قریش کا ایک شخص ہے جو ہے تو حضرت علیعليه‌السلام لیکن ہم کبھی اسکا نام نہیں لیں گے(۴) _

____________________

۱) مشکل الآثارج ۱ص ۱۳۷ ، ۱۳۸، الاستیعاب ( حاشیہ الاصابة) ج۲ص ۳۸۳ ، الدرالمنثورج ۴ص۶۹ ، روایات از نحاس، سعید بن منصور ، ابن جریر ، ا بن المنذروا بن ابی حاتم، دلائل الصدق ج۲ص ۱۳۵ ، غرائب القرآن نیشاپوری ج۱۳ ص ۱۰۰ (جامع البیان کے حاشیہ پر مطبوع) الاتقان ج۱ ص۱۲، احقاق الحق ج۳ ص ۲۸۰ تا ۲۸۴ ، الجامع الاحکام القرآن ج۹ ص ۳۳۶ نیز ینابیع المودة ص ۱۰۴ و ۱۰۳_ ۲) الدرالمنثور ج۴ص۶۹ ، عبدالرزاق اور ابن المنذر نے زھری سے روایت کی ہے_

۳) شواھد التنزیل حسکانی ج۱ص۳۰۷ ، ۳۰۸ ، ۳۱۰ ،مناقب ابن المغاز لی حدیث نمبر ۳۶۱ ، الخصائص ص ۲۶ ، غایة المرام ص ۳۵۷ ،۳۶۰، ازتفسیر ثعلبی والحبری ( خطی نسخہ) عمدة ابن بطریق ص ۱۲۴ ، دلائل الصدق ج ۲ص۱۳۵ ، (ینابیع المودة اور ابی نعیم سے منقول )_ ینابیع المودة ص ۱۰۲و ۱۰۵ نیز ملاحظہ ہو ملحقات احقاق الحق ج۴ ص ۳۶۲ و ۳۶۵ و ج۳ ص ۴۵۱ و ص ۴۵۲ و ج۳ ص ۲۸۰ تا ص ۲۸۵ حاشیہ اور متن دونوں ج۲۰ ص ۷۵ تا ۷۷ کثیر منابع سے ، اور الجامع لاحکام القرآن ج۹ ص ۳۳۶_ ۴) شواھد التنزیل ج ۱ص۳۱۰ نیز ملحقات احقاق الحق ج۱۴ ص ۳۶۴_

۱۸

ہم پوچھتے ہیں : اے شخص تم ان کا نام کیوں نہیں لینا چاہتے ؟ جبکہ تمہیں اس بارے میں اچھی طرح علم ہے؟ پس کیوں حق کو چھپارہے ہو؟ کیا تم اس بات سے ڈرتے ہو کہ تم پر شیعہ ہونے کی تہمت لگ جائے گی جو کفرو الحاد کے برابر سمجھی جاتی ہے؟ اور پھر کیا تمہیں علیعليه‌السلام اور اہل بیتعليه‌السلام کے دشمنوں کی طرف سے مصائب و مشکلات کا خوف ہے کہ جو حکومت و سلطنت پر قابض تھے؟یہانتک کہ کسی شاعر نے یہ بھی کہا ہے;

و متی تولی آل احمد مسلم

قتلوه او وصموه بالالحاد(۱)

(اور جب کوئی مسلمان آل احمدصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم سے اظہار مؤدت کرتاہے تو وہ اسے قتل کردیتے ہیں یا اس پر کفر و الحاد کا الزام لگادیتے ہیں)_

دو اہم نکات:

پہلا اہم نکتہ:

بعید نہیں ہے کہ عبد اللہ بن سلام کو یہ تمغے معاویہ اور اس کے چیلوںنے ہی عطا کئے ہوں_ اس کی دلیل قیس بن سعد بن عبادہ کی وہ روایت ہے جس میں وہ کہتاہے کہ( و من عنده علم الکتاب ) سے مراد علیعليه‌السلام ہیں لیکن معاویہ بن ابوسفیان کہتاہے کہ وہ عبد اللہ بن سلام ہے _ جس پر سعد کہتاہے کہ خدا نے( انما انت منذر و لکل قوم هاد ) اور( افمن کان علی بینة من ربه و یتلوه شاهد منه ) والی آیتیں نازل کیں اور پہلی آیت میں ہادی اور دوسری آیت میں شاہد(گواہ) سے مراد حضرت علیعليه‌السلام ہیں کیونکہ نبیصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم کریم نے انہیں غدیر کے دن منصوب فرمایا اور''من کنت مولاه فعلی مولاه'' کا فرمان ارشاد فرمایا اور یہ فرمایا :

____________________

۱) حیاة الامام الرضا السیاسیة از مؤلف و مجموعة الرسائل الخوارزی ا ہل نیشابور کے لیے_

۱۹

( انت منی بمنزلة هارون من موسی الا انه لا نبی بعدی ) جس پر معاویہ خاموش ہوگیا اور اس کا جواب نہ دے سکا(۱) _

دوسرا اہم نکتہ :

یہاں ایک قابل توجہ بات یہ ہے کہ جس شخص سے مذکورہ آیت کو منسوب کیا جارہاہے اور امیر المؤمنین علیعليه‌السلام کے فضائل کو جھوٹے دعوؤں کے ذریعہ زبردستی اس کی طرف نسبت دی جارہی ہے وہ ہمیشہ علیعليه‌السلام کے دشمنوں کی مدد کیا کرتا تھا اور جب خلافت کے سلسلے میں لوگ آپعليه‌السلام کی بیعت کررہے تھے تو اس نے آپعليه‌السلام کی بیعت سے اجتناب کیا تھا(۲) _

یہ جو ابن سلام کو اتنی اہمیت دی گئی ہے، اس کی شخصیت کیلئے مقام و منزلت کوثابت کیاگیا ہے نیز رسول اکرمصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم اور وحی الہی کی تصدیق میں اس کی پہل کو ذکر کیا گیاہے اس سب اہتمام میںشاید یہی راز پوشیدہ ہے ( کہ وہ دشمن علیعليه‌السلام تھا)_

شیخ ابوریہ کہتے ہیں کہ یہ ابن سلام( اپنے یہودی مذہب کی) اسرائیلی روایات، اسلامی احادیث میں داخل کیا کرتا تھا(۳) اور یہودی حضرت جبرائیلعليه‌السلام کے سخت دشمن تھے_ اور شاید یہی سبب تھا کہ( و اذ را او تجارة او لهوا انفضوا الیها ) والی آیت میں ''لہو'' کی تشریح عبد اللہ بن سلام یوں کرتاہے کہ ''لہو'' سے مراد لوگوں کا دحیہ کلبی کے حسن کی وجہ سے اس کے چہرے کی طرف دیکھنا ہے _ جبکہ روایتوں میں آیاہے کہ حضرت جبرائیلعليه‌السلام اسی دحیہ کی شکل میں آپصلى‌الله‌عليه‌وآله‌وسلم پر نازل ہوتے تھے(۴) اور واضح رہے کہ بعض خلفاء بالخصوص حضرت عثمان ، اہم امور میں اس سے مشورہ کیا کرتے تھے اور وہ انہیں اپنے نظریات کے مطابق

____________________

۱)ینابیع المودة ص ۱۰۴ نیز کتاب سلیم بن قیس_

۲)حضرت علیعليه‌السلام کی بیعت نہ کرنے کے سلسلے میں ملاحظہ ہو: شرح نہج البلاغہ ابن ابی الحدید ج ۴ ص ۹_

۳)ملاحظہ ہو: ابوریہ کی کتب شیخ المضیرہ و اضواء علی السنة المحمدیہ_

۴)ملاحظہ ہو: التراتیب الاداریہ ج۱ ص ۱۹۰_

۲۰