‏تعلیم دین ساده زبان میں(جلد دوم) جلد ۲

‏تعلیم دین ساده زبان میں(جلد دوم) 0%

‏تعلیم دین ساده زبان میں(جلد دوم) مؤلف:
زمرہ جات: متفرق کتب
صفحے: 285

‏تعلیم دین ساده زبان میں(جلد دوم)

مؤلف: ‏آیة الله ابراهیم امینی
زمرہ جات:

صفحے: 285
مشاہدے: 26335
ڈاؤنلوڈ: 1184


تبصرے:

جلد 1 جلد 2 جلد 3 جلد 4
کتاب کے اندر تلاش کریں
  • ابتداء
  • پچھلا
  • 285 /
  • اگلا
  • آخر
  •  
  • ڈاؤنلوڈ HTML
  • ڈاؤنلوڈ Word
  • ڈاؤنلوڈ PDF
  • مشاہدے: 26335 / ڈاؤنلوڈ: 1184
سائز سائز سائز
‏تعلیم دین ساده زبان میں(جلد دوم)

‏تعلیم دین ساده زبان میں(جلد دوم) جلد 2

مؤلف:
اردو

بالخصوص بچّوں اورنوجوانوں کو تاکید کی کہ ان درختوںکی حفاظت کریں اوردیکھتے رہیں اورفرمایا کہ یہ درخت تم سب کے ہیں کس کو حق نہیں پہنچتا کہ اس عمومی درخت کو کووئی گزند پہنچائے ہوشیار رہنا کہ کوئی اس کی شاخیں نہ کاٹے کہ یہ گناہ بھی ہے، ہوشیار رہنا کہ حیوانات ان درختوں کوضرر نہ پہنچائیں جب سے ہم نے یہ سمجھا ہے کہ ہمارے پیغمبر (ص) شجر کاری کو پسند فرماتے ہیںجس کے نتیجے میں ہمارا گاؤں سرسبز اورمیوے دارباغوں سے پر ہوچکا ہے اس عالم کی رہنمائی اورلوگوں کی مدد سے اب حمام بھی صاف وستھرا ہوگیا ہے اورمسجد پاک و پاکیزہ ہے ایک اچھی لائبریری اورایک ڈسنپسری تمام لوازمات کے ساتھ یہاں موجودہے اوراس گاؤں کے چھوٹے بڑے لڑکے لڑکیاں پڑھے لکھے صاف و ستھرے ہیںجب میرے چچازاد بھائی کی بات یہاں تک پہنچی تو میںنے کہا کہ میں اس عالم دین اورتم کو اور تمام گاؤں میں رہنے والوں کو آفرین اور شاباش کہتا ہوں اے کاش تمام دیہات کے لوگ اور دوسرے شہروں کے لوگ بھی تم سے دینداری اور اچھی زندگی بسر کرنے کا درس لیتے_

سوالات

۱)___ آپ اپنے گھر کی کثافت اور گندگی کو کیا کرتے ہیں؟

۲۶۱

۲)___ جو شخص اپنے گھر کی گندگی نالی وغیرہ میں ڈالے تو اسے کیا کہتے ہیں اوراس کی کس طرح رہنمائی کریں گے؟

۳)___ جو شخص اپنے گھر کی گندگی کوچے یا سڑک پر ڈالتا ہے تو اسے کیا کہتے ہیں پیغمبر اسلام(ص) کی کونسی فرمائشے اس کے سامنے بیان کریں گے؟

۴)___ سڑک گلی کوچوں اور اپنے رہنے کی جگہ کو صاف رکھنے کیلئے کون سے کام انجام دینے چاہیں؟

۵)___ ہمارے پیغمبر اسلام(ص) نے شجرکاری کے متعلق کیا فرمایا ہے؟

۶)___ آپ درخت لگانے کے لئے کیا کوشش کرسکتے ہیں؟

۷)___ آپ عمومی درختوں کی حفاظت اور نگاہ دی کس طرح کرتے ہیں؟

۸)___ اب تک آپ نے کتنے درخت لگائے ہیں؟

۲۶۲

پانچواں سبق

جھوٹ کی سزا

ہم نے ایک دن سیر کا پروگرام بنایا اورہر ایک اپنے ساتھ کچھ خوراک لے آیا ادہر کلاس کی گنھٹی بجی سب خوش خوش ہنستے کھیلتے کلاس میں گئے منتظر تھے کہ استاد کلاس میں آئیں اور سیر کو جانے کے پروگرام کو بتلائیں_ سوچ رہے تھے کہ آج کتنا اچھا دن ہوگا ایک موٹر سیر کے لئے کرائے پر لے رکھی تھی وہ بھی آگئی اور مدرسہ کے دروازے کے سامنے کھڑی ہوگئی کلاس کے مانیٹر صاحب آج غیر حاضر تھے ہم جماعت لڑکیوں میں سے ایک لڑکا کہ جس کا نام حسن مانیٹر تھا استاد کی میز کے سامنے گیا اور کہا لڑکو لڑکو، میں اب مانیٹر کی جگہ ہوں جب استاد آئیں گے تو میں کہوں گا کھڑے ہوجاؤ تو تمام منظم طریقے سے کھڑے ہوجانا اور یاد رکھنا جو منظم طریقے سے

۲۶۳

کھڑا نہ ہوگا اسے استاد سیر کو نہیں لے جائیں گے تمام لڑکے چپ بیٹھے ہوئے تھے کہ اچانک حسن نے کہا کھڑے ہوجاؤ تمام لڑکے مؤدّب اور منظّم طریقہ سے کھڑے ہوگئے کلاس کا دروازہ کھلا ایک لڑکا جو آج دیر سے آیا تھا وہ اندر داخل ہوا_ حسن بلند آواز سے ہنسا اور اس کے کہا لڑکو میں نے مذاق کیا ہے بیٹھ جاؤ تھوڑا سا وقت گزر ا تھا تمام لڑکے استاد کے آنے کا انتظار کر رہے تھے حسن نے کلاس کے دروازے پر نگاہ کی اور چپ کھڑا ہوگیا اور اس کے بعد بلند آواز سے کہا کھڑے ہوجاؤ تمام لڑکے کھڑے ہوگئے کلاس کا دروازہ آرام سے کھلا_ تیسری کلاس کے ایک لڑکے نے جو اپنے بھائی کا بستہ لایا تھا کہ اسے یہاں دے جائے اس نے بھائی سے کہا کہ کیوں اپنا بستہ آج ساتھ نہیں لائے تھے؟بھائی نے جواب دیا کہ آج سیر کو جانا تھا بستہ کی ضرورت نہیں تھی اس دفعہ ہم پھر بیٹھ گئے لیکن بہت ناراض ہوئے حسن پہلے تو تھوڑاسا ہنسا لیکن بعد میں کہا لڑکو مجھے معاف کرنا میں نے غلطی کی تھی تم بیٹھ جاؤ میں باہر جاتا ہوں تا کہ دیکھوں کہ آج استاد کیوں نہیں آئے حسن چلاگیا اور تھوڑی دیر کے بعد واپس لوٹ آیا اور کہنے لگا لڑکو سنو سنو استاد نے کہا ہے کہ آج سیر کو نہیں جائیں گے لڑکوں کا شور بلند ہوا آپ نہیں سمجھ سکتے کہ لڑکے کتنے ناراض ہوئے اسی اسی حالت میں کلاس کا دروازہ کھلا حسن نے کلاس کے دروازے کی طرف دیکھا اور اپنے آپ کو سنبھالا اور کہا کھڑے ہوجاؤ

۲۶۴

کھڑے ہوجاؤ کوئی بھی نہ اٹھا سب نے کہا حسن جھوٹ بول رہا ہے جھوٹ کہہ رہے ہے لیکن اس دفعہ استاد کلاس میں داخل ہوچکا تھا اور کلاس کے دروازے کے پیچھے حسن کی گفتگو کو سن چکا تھا اس سے کہا کہ کس نے آپ کو کہا ہے کہ آج سیر کو نہیں جائیں گے کیوں میری طرف جھوٹ کی نسبت دی ہے حسن اپنا سر نیچے کئے ہوئے تھا اس نے کوئی جواب نہیں دیا استاد نے کہا لڑکو سب مدرسہ کے صحن میں چلے جاؤ اور قطار بناؤ تا کہ موٹر پر سوار ہوں ہم بہت خوش ہوئے مدرسے کے صحن میں گئے اور قطار بنائی اور اپنی اپنی باری پر موٹر میں سوار ہوگئے_ لیکن جب حسن موٹر پر سوار ہونا چاہتا تھا تو استاد نے اسے کہا___تم ہمارے ساتھ سیر کو نہیں جاسکتے ہم جھوٹے طالب علم کو ساتھ نہیں لے جاسکتے حسن نے رونا شروع کردیا استاد کا ہاتھ پکڑا اور کہا کہ میں نے غلطی کی ہے مجھے معاف کردیں اور بہت زیادہ اصرار کیا استاد نے کہا اے حسن میں تمہارے اس چلن سے بہت ناراض ہوں بہتر یہی ہے کہ ہمارے ساتھ سیر کولے جائیں تو اس وقت میں تمہیں اپنے ساتھ سیر کو لے جاؤں گا کیونکہ تمام لڑکے حسن کی دروغ گوئی سے ناراض ہوچکے تھے استاد سے انہوں نے کچھ نہ کہا اور کسی بچّے نے بھی استاد سے اس چیز کی درخواست نہ بلکہ بعض آہستہ سے کہہ رہے تھے کہ ہم نہیں _چاہتے کہ حسن ہمارے ساتھ سیر کو جائے

۲۶۵

استاد بھی موٹر پر سوار ہوگئے موٹر بچّوں کی مسرّت آمیز آواز میں مدرسے سے دور نکل گئی چوتھی کلاس کے لڑکوں میں سے صرف حسن مدرسہ میں رہ گیا چونکہ جھوٹ بولتا تھا ا سی لئے اپنی عزّت اور احترام کو کھو بیٹھا اور سیر سے بھی محروم ہوگیا یہ تو تھا اس دنیا کا نتیجہ لیکن آخرت میں جھوٹوں کی سزا سخت اور دائمی ہے_

ہمارے پیغمبر (ص) نے فرمایا مسلمان اورایمان دار شخص کبھی جھوٹ نہیں بولتا_

امام سجّاد (ع) نے فرمایا ہے جھوٹ سے بچو خواہ وہ چھوٹا ہو یا بڑا خواہ مذاق میں ہو یا بالکل حقیقت ہو_

حضرت امام محمد باقر علیہ السلام نے فرمایا ہے جھوٹ ایمان کو برباد اور ویران کردیتا ہے_

سوالات

۱)___ لڑکوں نے تمام واقعات میں حسن کی بات کوسچ سمجھا اور کیوں؟

۲)___ کیا لوگ جھوٹے کی بات پراعتماد کرتے ہیں اور کیوں؟

۳)___ کیا بتلا سکتے ہیں کہ طالب علم جو سیر کو گئے تھے کتنے تھے اور حسن کے ساتھ کتنے دوست تھے؟

۲۶۶

۴)___ آیا کوئی آدمی جھوٹے کے ساتھ دوستی کرتا ہے اور کیوں؟

۵)___ آپ کی نگاہ میںاگر حسن کو سیر پر لے جاتے تو بہتر نہ ہوتا اور کیوں؟

۶)___ اگر کوئی مزاح میں بھی جھوٹ بولتے تو اس کی کس طرح رہنمائی کریں گے اور اس سے کیا کہیں گے؟

۷)___ کیا مزاح میں جھوٹ بولنا برا اور گناہ ہے اور کیوں ؟

۸)___ آپ کی نگاہ میں حسن کیوں جھوٹ بولتا تھا؟

۹)___ جھوٹ ایمان کو ویران کردیتا ہے_ کا کیا مطلب ہے؟

۲۶۷

چھٹا سبق

سڑک سے کیسے گزریں

مدرسے میں چھٹی ہوئی لڑکے کی طرف روانہ ہوگئے پیدل چلنے کی جگہ پر بہت بھیڑ تھی جواد نے اپنے دوست رضا سے کہا کتنی بھیہڑ ہے یہاں تو چلنا بہت مشکل ہے آؤ سڑک کے کنارے چلیں رضا نے کہا سڑک موٹروں کے آنے جانے کی جگہ ہے پیدل چلنے والوں کے لئے نہیں سڑک پر چلنا خطرناک ہوتا ہے اور رائیوروں کے لئے بھی مشکل پیدا ہوجاتی ہے اللہ اس کو دوست نہیں رکھتا جو دوسروں کے لئے مشکلات پیدا کریں جواد نے کہا یہ تم کیا کہہ رہے ہو یہاں اس بھیر میں تو نہیں چلا سکتا خدا حافظ میں چلا یعنی سڑک کے ساتھ چلنے کے لئے یہ کہا اور رضا سے علی حدہ ہوگیا اور جلدی سے سڑک کے کنارے تیزی سے دوڑ نے لگا جواد

۲۶۸

سچ کہہ رہا تھا کہ فٹ پاتھ پر پیدل چلنے والوں کی بھیڑ تھی وہ تو اتنی جلدی سے نہیں چل سکتا ہے وہ چاہتا تھا کہ گھر جلدی پہنچ جائے_ رضا نے جب دیکھا کہ اس کا دوست بہت جلدی میں اس سے دور نکل گیا ہے تو اس نے سوچا کہ وہ بھی سڑک پر چلاجائے اور جواد سے پیچھے نہ رہ جائے لیکن اسے یاد آیا کہ اس نے تو خود جواد سے کہا تھا کہ خدا پسند نہیں کرتا کہ دوسروں کے لئے مشکلات پیدا کی جائیں اور سڑک پر چلنا خطرناک ہے اور ڈرائیوروں کے لئے مشکلات اور زحمت پیدا ہوجاتی ہے_ اسی سوچ میں تھا کہ بریک کی ایک مہیب آواز سنائی دی لوگ موٹر کی طرف دوڑے لیکن تھوڑی سی دیر بعد اس موٹر نے حرکت کی اور چلی گئی لوگ کہہ رہے تھے کہ خطرناک ایکسیڈنٹ تھا شاید کوئی مرگیا ہوگا اللہ کرے کہ ہسپتال تک جائے زندہ رہے رضا نے لوگوں کی یہ باتیں سنیں اور چند منٹ کے بعد گھر پہنچ گیا تھوڑا سا وقت گزرا تھا گویا ایک گھنٹہ_ جواد کی ماں رضا کے گھرآئی اور رضا سے پوچھا کہ جواد کو تو نہیں دیکھا تھا ابھی تک وہ نہیں آیا رضا نے کہا کہ جواد کہہ رہا تھا کہ مجھے کچھ کام ہے میں چاہتا ہوں کہ گھر جلدی جاؤں مجھ سے الگ ہوگیا اور جلدی میں سڑک پر دوڑنے لگا اسے ایکسیڈنٹ یاد آیا تو کہا اوہ: شاید جواد کا ایکسیڈنٹ ہوا ہے جواد کی ماں نے کہا ایکسیڈنٹ؟ تو پھر میرا لڑکا اب کہاں ہے؟ جواد نے کہا کہ میں نے کچھ نہیں دیکھا صرف سنا تھا کہ لوگ کہہ رہے تھے کہ ہسپتال لے گئے ہیں_ جواد کی ماں ہسپتال دوڑی گئی اور پوچھا کہ

۲۶۹

میرے بیٹے جواد کو یہاں لائے ہو کہا گیا کہ تمہارے لڑک کو دوگھنٹے پہلے یہاں لائے تھے آؤ اس کو دیکھو جواد کی ماں نے اسے دیکھا جواد تھا لیکن خونی چہرے کے ساتھ بستر پر لیٹا ہوا تھا_ دو دن کے بعد رضا اپنی ماں کے ساتھ اس کی عیادت کے لئے گیا جواد بستر پر سویا ہوا تھا اسے پلستر کیا گیا تھا اور اس کا تمام جسم درد کر رہا تھا ایک مہینے کے بعد بیسا کھی کی مدد سے مدرسہ گیا اور کلاس میں شریک ہوا استاد اور تمام ہم کلاس لڑکے اسے دیکھ کر خوش ہوئے اور اس حادثہ کے متعلق سوال کیا_

استاد نے کلاس کے لڑکوں کے سامنے اسکی وضاحت کی اور کہا کہ اس قسم کے حادثات سے بچنے کے لئے ٹریفک کے قواعد اور قوانین کی پابندی کی جائے کیونکہ ٹرفیک کے قوانین تمام دنیا میں خطرات کو کم کرنے کے لئے بنائے گئے ہیں جواد چاہتا تھا اکہ گھر جلدی پہنچ جائے لیکن ٹریفک کے قوانین کی خلاف ورزی کرنے کی وجہ سے ہر روز کی نسبت وہ دیر سے گھر پہنچا حالانکہ اگر پیدل چلنے والی جگہ سے جاتا تو اس سے بہت زیادہ جلدی گھر پہنچ جاتا آپ جب بھی سڑک کی دوسری طرف جانا چاہیں تووہاں سے جائیں جہاں سفید خطوط بنائے گئے ہیں یاچوک کے نزدیک احتیاط سے دوسری طر ف جائیں سڑک پر دوڑ کرنہ جائیں اورکبھی بھی سڑک کے وسط میں نہ چلیں_

پیغمبر اسلام (ص) نے فرمایا ہے کہ راستے کے وسط میں جانا

۲۷۰

سوار لوگوں کے لئے ہے سوار انسان پیدل چلنے والوں پرتقدم کاحق رکھتا ہے_

سوالات

۱)___ حق تقدم کا کیا مطلب ہے کن لوگوں کو راستہ چلتے وقت تقدم کا حق ہے ہمارے پیغمبر (ص) نے اس کے متعلق کیا فرمایا ہے پیدل چلنے والوں کا حق سڑک پر کس طرف ہے؟

۲)___ جواد کا ایکسیڈنٹ کیوں ہوا اوررضانے اس سے کیا کہا تھا اگر رضا کی بات کومان لیتا توگھر کیسے پہنچ جاتا_

۳)___ جب کسی سڑک کو عبور کرنا چاہیں تو کس طرح اور کہاں سے عبور کریں گے؟

۴)___اس قسم کے حادثہ سے بچنے کے لئے کس قسم کی احتیاط کی ضرورت ہے؟

۵)___ ٹریفک کے بعض قوانین جو آپ جانتے ہیں بیان کریں؟

۶)___ جب جواد اپنی کلاس میں گیا تو استاد نے کس موضوع کو وضاحت سے بیان کیا؟

۷)___ کیا تم پہلے سے ٹریفک کے قوانین کی پابندی کرتے

۲۷۱

تھے؟ اور اب کیسے؟ ان کی پابندی کی کوشش کریں

ہم آپ کو مبارک باد دیتے ہیں کہ آپ نے یہ کتاب پڑھی ہے اور سمجھی ہے انشاء اللہ آپ اپنی زندگی میں اس پر عمل کریں گے کتنا اچھا ہے کہ آپ اپنے مخلص دوستوں کو بھی کہیں اس کتاب کو حاصل کر کے پڑھیں اور اس کی مشقوں کو حل کریں اور انہیں اچھی طرح یاد کریں اور جن کو یاد کرلیا ہے اسے اپنی زندگی کے لئے آئین قرار دیں اور اس پر عمل کریں_

۲۷۲

فہرست

عرض ناشر ۴

حصّہ اوّل ۷

خداشناسی ۷

پہلا سبق ۸

خدا خالق کائنات ۸

سوچو ا ور جواب دو ۱۰

تجزیہ کیجئے اور غور کیجئے ۱۱

تجزیہ کیجئے اور غور کیجئے ۱۲

تجربہ کیجئے اور فکر کیجئے ۱۲

دوسرا سبق ۱۴

خدا کی بہترین تخلیق_ پانی ۱۴

تجربہ کر کے غور کیجئے ۱۵

سوچئے اور خالی جگہیں پر کیجئے ۱۶

تیسرا سبق ۱۷

سیب کا درخت خداشناسی کا سبق دیتا ہے ۱۷

فکر کیجئے اور جواب دیجئے ۱۸

چوتھا سبق ۲۰

نباتات کے سبز پتے یا خداشناسی کی عمدہ کتابیں ۲۰

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۲۲

۲۷۳

تجربہ اور تحقیق کیجئے ۲۲

مشق ۲۲

پانچواں سبق ۲۳

تجربے کی روش خداشناسی کا سبق دیتی ہے ۲۳

کیا بتلا سکتی ہو کہ غذا کسے راستے سے معدہ میں جاتی ہے؟ ۲۴

غور کریں اور جواب دیں ۲۶

چھٹا سبق ۲۸

خدا کی قدرت کے آثار اور اس کی علامتیں ۲۸

نظام تنفس اور دوران خون ۲۹

بہت غور سے ان سوالوں کا جواب دیجئے ۳۲

اس سے کیا سمجھتے ہیں؟ ۳۴

ساتواں سبق ۳۵

عالم و قادر خدا ۳۵

اس سبق کے متعلق آپ خود سوال بنائیں ۳۶

اور مشقیں بھی آپ خود بتلائیں ۳۷

آٹھواں سبق ۳۸

خدا جسم نہیں رکھتا ۳۸

کیا آپ جانتے ہیں جسم کیا ہے؟ ۳۸

''فکر کیجئے اور جواب دیجئے'' ۴۰

مشقیں ۴۰

۲۷۴

نواں سبق ۴۱

کیا خدا غیر مرئی ہے ۴۱

فکر کیجئے اور جواب دیجئے ۴۲

دسواں سبق ۴۳

موحّدین کے پیشوا حضرت ابراہیم (ع) ۴۳

غور کریں اور جواب دیں ۴۶

حصّہ دوم معاد ۴۸

حصّہ دوم معاد ۴۸

پہلا سبق ۴۹

کیا اچھائی اور برائی برابر ہیں ۴۹

اب ان سوالوں کے جواب دیں_ ۴۹

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۵۱

دوسرا سبق ۵۲

پھول کی تلاش ۵۲

جزاء کا دن ۵۴

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۵۶

تیسرا سبق ۵۸

جہان آخرت عالم برزخ اور قیامت ۵۸

برزخ میں سوال و جواب ۶۰

غور کیجئے او رجواب دیجئے ۶۱

۲۷۵

چوتھا سبق ۶۲

مردے کیسے زندہ ہونگے ۶۲

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۶۴

پانچواں سبق ۶۵

کس طرح ۶۵

ہماری زندگی کے کام ۶۶

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۶۸

حصّہ سوم ۶۹

حصّہ سوم ۶۹

نبوّت ۶۹

پہلا سبق ۷۰

صراط مستقیم ۷۰

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۷۱

اور کیوں وضاحت کیجئے؟ ۷۲

دوسرا سبق ۷۳

کمال انسان ۷۳

انسان کو بھی اپنے مقصد خلقت کوحاصل کرنا چاہیے کس طرح اور کس کے ماتحت؟ ۷۴

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۷۵

تیسرا سبق ۷۶

راہنما کیسا ہونا چاہیئے ۷۶

۲۷۶

چوتھا سبق ۷۷

پیغمبر کو کیسا ہونا چاہیے ۷۷

پانچواں سبق ۷۸

اجتناب گناہ کا فلسفہ ۷۸

چھٹا سبق ۷۹

پیغمبر آگاہ اورمعصوم راہنما ہیں ۷۹

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۸۰

ساتواں سبق ۸۲

اسے کیسے پہنچانتے ہیں اور اس سے کیا چاہتے ہیں ۸۲

آٹھواں سبق ۸۵

رسالت کی نشانیاں ۸۵

سوالات ۸۷

نواں سبق ۸۸

نوجوان بت شکن ۸۸

حضرت ابراہیم (ع) نمرود کی عدالت میں ۹۰

حضرت ابراہیم (ع) اور اتش نمرود ۹۳

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۹۵

دسواں سبق ۹۷

حضرت موسی (ع) خدا کے پیغمبر تھے ۹۷

حضرت موسی (ع) فرعون کے قصر میں ۹۹

۲۷۷

آخری فیصلہ ۱۰۱

سوالات ۱۰۳

گیارہواں سبق ۱۰۵

پیغمبر اسلام (ص) قریش کے قافلے میں ۱۰۵

سوالات ۱۰۸

بارہواں سبق ۱۰۹

مظلوموں کی حمایت کا معاہدہ ۱۰۹

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۱۱۱

تیرہواں سبق ۱۱۳

پیغمبر اسلام (ص) کی بعثت ۱۱۳

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۱۱۶

چودہواں سبق ۱۱۸

اپنے رشتہ داروں کو اسلام کی دعوت ۱۱۸

سوالات ۱۲۲

پندرہواں سبق ۱۲۴

صبر و استقامت ۱۲۴

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۱۲۶

سولہواں سبق ۱۲۸

دین اسلام کا تعارف ۱۲۸

سوالات ۱۳۱

۲۷۸

سترہواں سبق ۱۳۳

مظلوم کا دفاع ۱۳۳

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۱۳۷

اٹھارہواں سبق ۱۳۹

خدا کا آخری پیغمبر حضرت محمد(ص) ۱۳۹

ان مطالب کو دیکھتے ہوئے مندرجہ ذیل جملے مکمل کیجئے ۱۴۰

انیسواں سبق ۱۴۳

قرآن اللہ کا کلام ہے ۱۴۳

بیسواں سبق ۱۴۷

قرآن پیغمبر اسلام(ص) کا دائمی معجزہ ہے ۱۴۷

سوالات ۱۴۸

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۱۴۹

اکیسواں سبق ۱۵۰

سبق آموز کہانی دو بھائی ۱۵۰

ایک تربیتی کہانی ظالم حریص قارون ۱۵۳

خوشبختی اور سعادت کس چیز میں ہے ۱۵۵

حضرت موسی (ع) کی دعا قبول ہوئی ۱۵۸

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۱۵۸

چوتھا حصّہ ۱۶۰

چوتھا حصّہ ۱۶۰

۲۷۹

امامت ۱۶۰

پہلا سبق ۱۶۱

پیغمبر کا خلیفہ اور جانشین کون ہوسکتا ہے ۱۶۱

پیغمبر(ص) کا جانشین کیسا ہونا چاہیئے ۱۶۲

دوسرا سبق ۱۶۳

پیغمبر کا جانشین امام معصوم ہوتا ہے ۱۶۳

سوالات ۱۶۴

تیسرا سبق ۱۶۵

عید غدیر ۱۶۵

سوالات ۱۶۸

چوتھا سبق ۱۷۰

شیعہ ۱۷۰

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۱۷۲

پانچواں سبق ۱۷۳

آٹھویں امام حضرت امام رضا علیہ السلام ۱۷۳

چھٹا سبق ۱۷۶

اسراف کیوں؟ ۱۷۶

غور کیجئے اور جواب دیجئے ۱۷۹

ساتواں سبق ۱۸۰

نویں امام ''حضرت امام محمد تقی علیہ السلام ۱۸۰

۲۸۰