موجِ ادراک

موجِ ادراک0%

موجِ ادراک مؤلف:
زمرہ جات: شعری مجموعے
صفحے: 56

موجِ ادراک

مؤلف: محسن نقوی
زمرہ جات:

صفحے: 56
مشاہدے: 13621
ڈاؤنلوڈ: 957

تبصرے:

موجِ ادراک
کتاب کے اندر تلاش کریں
  • ابتداء
  • پچھلا
  • 56 /
  • اگلا
  • آخر
  •  
  • ڈاؤنلوڈ HTML
  • ڈاؤنلوڈ Word
  • ڈاؤنلوڈ PDF
  • مشاہدے: 13621 / ڈاؤنلوڈ: 957
سائز سائز سائز
موجِ ادراک

موجِ ادراک

مؤلف:
اردو

۱

یہ کتاب برقی شکل میں نشرہوئی ہے اور شبکہ الامامین الحسنین (علیہما السلام) کے گروہ علمی کی نگرانی میں تنظیم ہوئی ہے

۲

موجِ ادراک

ماخوذ از برگ صحرا

مصنف:

محسن نقوی

۳

اے عالمِ نجوم و جواہر کے کِردگار

اے عالمِ نجوم و جواہر کے کِردگار !

اے کارسازِ دہر و خداوندِ بحر و بر

اِدراک و آگہی کے لیے منزلِ مراد

بہرِ مسافرانِ جنوں ، حاصلِ سفر !

یہ برگ و بار و شاخ و شجر ، تیری آیتیں

تیری نشانیاں ہیں یہ گلزار و دشت و در

یہ چاندنی ہے تیرے تبسم کا آئینہ

پرتَو ترے جلال کا بے سایہ دوپہر !

موجیں سمندروں کی ، تری رہگزر کے موڑ

صحرا کے پیچ و خم ، ترا شیرازہ ہُنر !

اُجڑے دلوں میں تیری خموشی کے زاویے

تابندہ تیرے حرف ، سرِ لوحِ چشم تر

***

۴

موجِ صبا ، خرام ترے لطفِ عام کا

موجِ صبا ، خرام ترے لطفِ عام کا

تیرے کرم کا نام ، دُعا در دُعا ، اثر

اے عالمِ نجوم و جواہر کے کِردگار !

پنہاں ہے کائنات کے ذوقِ نمو میں تُو

تیرے وجود کی ہے گواہی چمن چمن !

ظاہر کہاں کہاں نہ ہُوا ، رنگ و بُو میں تُو

مری صدا میں ہیں تری چاہت کے دائرے

آباد ہے سدا مرے سوزِ گلو میں تُو

اکثر یہ سوچتا ہوں کہ موجِ نفس کے ساتھ

شہ رگ میں گونجتا ہے لہُو ، یا لہُو میں تُو ؟

***

۵

اے عالمِ نجوم و جواہر کے کِردگار

اے عالمِ نجوم و جواہر کے کِردگار !

مجھ کو بھی گِرۂ شام و سحر کھولنا سکھا !

پلکوں پہ میں بھی چاند ستارے سجا سکوں

میزانِ خس میں مجھ کو گہر تولنا سکھا

اب زہر ذائقے ہیں زبانِ حروف کے

اِن ذائقوں میں "خاک شفا" گھولنا سکھا

دل مبتلا ہے کب سے عذابِ سکوت میں

تو ربِّ نطق و لب ہے ، مجھے "بولنا" سکھا

***

۶

عاشور کا ڈھل جانا ، صُغرا کا وہ مر جانا

عاشور کا ڈھل جانا ، صُغرا کا وہ مر جانا

اکبر تِرے سینے میں ، برچھی کا اُتر جانا

اے خونِ علی اصغر میدانِ قیامت میں

شبیر کے چہرے پر کچھ اور نکھر جانا

سجاد یہ کہتے تھے ، معصوم سکینہ سے

عباس کے لاشے سے چپ چاپ گزر جانا

ننھے سے مجاہد کو ماں نے یہ نصیحت کی

تِیروں کے مقابل بھی ، بے خوف و خطر جانا

محسن کو رُلائے گا ، تا حشر لہُو اکثر

زہرا تیری کلیوں کا صحرا میں بکھر جانا

***

۷

یہ دشت یہ دریا یہ مہکتے ہوئے گلزار

یہ دشت یہ دریا یہ مہکتے ہوئے گلزار

اِس عالمِ امکاں میں ابھی کچھ بھی نہیں تھا

اِک "جلوہ" تھا ، سو گُم تھا حجاباتِ عدم میں

اِک "عکس" تھا ، سو منتظرِ چشمِ یقیں تھا

***

یہ موسمِ خوشبو یہ گُہَر تابیِ شبنم

یہ موسمِ خوشبو یہ گُہَر تابیِ شبنم

یہ رونقِ ہنگامۂ کونین کہاں تھی؟

گُلنار گھٹاؤں سے یہ چَھنتی ہوئی چھاؤں

یہ دھوپ ، دھنک ، دولتِ دارین کہاں تھی ؟

***

۸

یہ نکہتِ احساس کی مقروض ہوائیں

یہ نکہتِ احساس کی مقروض ہوائیں

دلداری الہام سے مہکے ہوئے لمحات

دوشیزہ انفاس کی تسبیح کے تیوَر

کس کنجِ تصوُّر میں تھے مصروفِ مناجات

***

"شیرازہ آئینِ قِدَم" کے سبھی اِعراب

"شیرازہ آئینِ قِدَم" کے سبھی اِعراب

بے رَبطیِ اجزائے سوالات میں گُم تھے

یہ رنگ یہ نَیرنگ یہ اورنگ یہ سب رنگ

اِک پردۂ افکار و خیالات میں گُم تھے

***

۹

یہ پھُول یہ کلیاں یہ چَٹکے ہوئے غُنچے

یہ پھُول یہ کلیاں یہ چَٹکے ہوئے غُنچے

بے آب و ہوا تشنۂ آیات و مناجات

یہ برگ یہ برکھا یہ لچکتی ہوئی شاخیں

بیگانۂ آدابِ سحر ، بے لِم جذبات

***

کُہسار کے جَھرنوں سے پھسلتی ہوئی کرنیں

کُہسار کے جَھرنوں سے پھسلتی ہوئی کرنیں

اِک خوابِ مسلسل کے تحیّر میں نہاں تھیں

چپ چاپ فضاؤں میں مچلتی ہوئی لہریں

ماحول کے بے نطق تصوّر پہ گراں تھیں

***

۱۰

غم خانۂ ظلمت ، نہ کوئی بزمِ چراغاں

غم خانۂ ظلمت ، نہ کوئی بزمِ چراغاں

خورشید نہ مہتاب ، نہ انجم نہ کواکِب

شورش گۂ "کُن" تھی نہ یہ آوازِ دمادم

تفریقِ مَن و تُو ، نہ مساوات و مراتب

***

ہنگامۂ شادی ، نہ کوئی مجلسِ ماتم

ہنگامۂ شادی ، نہ کوئی مجلسِ ماتم

یلغارِ حریفاں ، نہ جلوسِ غمِ یاراں

آنکھوں میں کوئی زخم ، نہ سینے میں کوئی چاک

انبوۂ رقیباں ، نہ رُخِ لالہ عذاراں

***

۱۱

اَفلاس کا احساس ، نہ پندارِ زَر و سیم

اَفلاس کا احساس ، نہ پندارِ زَر و سیم

بخشش کے تقاضے ، نہ یہ دریوزہ گَری تھی

پتھر کا زمانہ تھا ، نہ شیشے کے مکاں تھے

یہ عقل کا دستور ، نہ شَوریدہ سَری تھی

***

مقتول کی فریاد ، نہ آوازۂ قاتل

مقتول کی فریاد ، نہ آوازۂ قاتل

مقتل تھے ، نہ شہ رگ میں لہو تھا ، نہ ہَوَس تھی

دربار ، نہ لشکر ، نہ کوئی عَدل کی زنجیر

دِل تھا ، نہ کہیں تیرگیِ کنجِ قفس تھی

***

۱۲

رہبر تھے ، نہ منزل تھی ، نہ رستے ، نہ مسافر

رہبر تھے ، نہ منزل تھی ، نہ رستے ، نہ مسافر

قندیل ، نہ جُگنو ، نہ ستارے ، نہ گُہر تھے

یہ اَبیض و اَسود ، نہ اَبّ و جَد ، نہ زَر و سیم

اِنساں تھے ، نہ حیواں ، نہ حَجر تھے ، نہ شَجر تھے

***

ہر سمت مسلط تھے تحیّر کے طلِسمات

ہر سمت مسلط تھے تحیّر کے طلِسمات

جیسے کسی مدفن میں ہو صدیوں کا کوئی راز

جس طرح کِسی اُجڑے ہوئے شہر کے سائے

یا موت کی ۂچکی میں پگھلتی ہوئی آواز

***

۱۳

جیسے کسی گھر میں صَفِ ماتم کی خموشی

جیسے کسی گھر میں صَفِ ماتم کی خموشی

یا دشت و بیاباں میں نزولِ شبِ آفات

جیسے کسی کہسار پہ تنہا کوئی خیمہ

یا شامِ غریباں کے تصرف میں سمٰوات

***

ہَولے سے سِرکنے لگے ہستی کے حجابات

ہَولے سے سِرکنے لگے ہستی کے حجابات

دھیرے سے ڈھلکنے لگا تخلیق کا آنچل

چھَن چھَن کے بکھرنے لگا "شیرازۂ کُن۔کُن"

رِم جھِم سے برسنے لگے احساس کے بادل

***

۱۴

پلکیں سی جھپکنے لگی دوشیزۂ کونین

پلکیں سی جھپکنے لگی دوشیزۂ کونین

ہلچل سی ہوئی پیکرِ عالم کی رگوں میں

آفاق کے سینے میں دھڑکنے لگیں کرنیں

"شیرازہ کُن" ڈھل بھی گیا تھا "فَیَکُوں" میں

***

ہر سمت بکھرنے لگیں وجدان کی کرنیں

ہر سمت بکھرنے لگیں وجدان کی کرنیں

کرنوں سے کھِلے رنگ تو رنگوں سے گلستاں

بیدار ہوئی خواب سے خوشبوئے رگِ گُل

خوشبو سے مہکنے لگا دامانِ بیاباں

***

۱۵

دامانِ بیاباں میں نہاں سینہ برفاب

دامانِ بیاباں میں نہاں سینہ برفاب

برفاب کے سینے میں تلاطم بھی شَرر بھی

اعجازِ لبِ کُن سے ہوئے خَلق بیک وقت

صحرا بھی ، سمندر بھی ، کہستاں بھی ، شجر بھی

***

پھر حِدّتِ تخلیق کی شدت سے پگھل کر

پھر حِدّتِ تخلیق کی شدت سے پگھل کر

جاگے کئی طوفان ، تۂ سینہ برفاب

ہر موج تھی پَروَردۂ آغوشِ تلاطم

ہر قطرہ کا دل ، صورتِ بے خوابی سِیماب

***

۱۶

شانوں پہ اُٹھائے ہوئے بارِ کفِ سیلاب

شانوں پہ اُٹھائے ہوئے بارِ کفِ سیلاب

بے سمت بھٹکنے لگیں منہ زور ہوائیں

مُنہ زور ہواوں کے تھپیڑوں کی دھمک سے

دِل بن کے دھڑکنے لگیں بے رنگ فضائیں

***

بے رنگ فضاؤں کے تحیر کی کَسک میں

بے رنگ فضاؤں کے تحیر کی کَسک میں

پنہاں تھے شب و روز سے آلود زمانے

بے اَنت زمانوں کے اُفق تھے نہ حدیں تھیں

آخر دیا تریتب انہیں دَستِ قضا نے

***

۱۷

پھر چشمِ تحیر نے یہ سوچا کہ فضا میں

پھر چشمِ تحیر نے یہ سوچا کہ فضا میں

شادابیِ گلزارِ طرب کس کے لیے ہے ؟

یہ کون ہُوا باعثِ تخلیقِ دو عالم ؟

یہ ارض و سما کیوں ہیں ، یہ سب کس کے لیے ہے ؟

***

تزئینِ مَہ و انجمِ افلاک کا باعث

تزئینِ مَہ و انجمِ افلاک کا باعث

ہے کون ؟ جو خلوت کے حجابوں میں چُھپا ہے ؟

تخلیقِ رگ و ریشۂ کونین کا مقصد

ہے کیا ؟ جو سرِ لوحِ شب روز لکھا ہے ؟

***

۱۸

ہے کس کے لیے عَشوہ بلقیسِ تصوّر

ہے کس کے لیے عَشوہ بلقیسِ تصوّر

یہ غمزۂ رخسارِ جہاں کس کے لیے ہے ؟

آرائشِ خال و خدِ ہستی کا سبب کون ؟

یہ انجمنِ کون و مکاں کس کے لیے ہے ؟

***

پھر ریشمِ انوار کا ملبوس پہن کر

پھر ریشمِ انوار کا ملبوس پہن کر

ظاہر ہوا اِک پیکرِ صد رنگ بصد ناز

نِکھرے کئی بکھرے ہوئے رنگوں کے مناظر

فطرت کی تَجلّی ہوئی آمادۂ اعجاز

***

۱۹

وہ پیکرِ تقدیس ، وہ سرمایہ تخلیق

وہ پیکرِ تقدیس ، وہ سرمایہ تخلیق

وہ قبلۂ جاں ، مقصدِ تخلیقِ دو عالم

وجدان کا معیار ، مَہ و مہر کا محوَر

وہ قافلہ سالارِ مزاجِ بنی آدم

***

وہ منزلِ اربابِ نظر ، فکر کی تجسیم

وہ منزلِ اربابِ نظر ، فکر کی تجسیم

وہ کعبۂ تقدیرِ دو عالم ، رخِ احساس

وہ بزمِ شب و روز کا سلطانِ مُعظّم

وہ رونقِ رخسارۂ فیروزہ و الماس

***

۲۰