آسمان (منتخب نعتیہ کلام)

آسمان (منتخب نعتیہ کلام)0%

آسمان (منتخب نعتیہ کلام) مؤلف:
زمرہ جات: شعری مجموعے
صفحے: 114

آسمان (منتخب نعتیہ کلام)

مؤلف: از : سعادت حسن آس
زمرہ جات:

صفحے: 114
مشاہدے: 26285
ڈاؤنلوڈ: 892

تبصرے:

آسمان (منتخب نعتیہ کلام)
کتاب کے اندر تلاش کریں
  • ابتداء
  • پچھلا
  • 114 /
  • اگلا
  • آخر
  •  
  • ڈاؤنلوڈ HTML
  • ڈاؤنلوڈ Word
  • ڈاؤنلوڈ PDF
  • مشاہدے: 26285 / ڈاؤنلوڈ: 892
سائز سائز سائز
آسمان (منتخب نعتیہ کلام)

آسمان (منتخب نعتیہ کلام)

مؤلف:
اردو

میں جن کو روح کے قرطاس پہ محسوس کرتا ہوں

وہ جذے کاش کاغذ پر اتر جائیں تو اچھا ہو

٭

وہاں کیسی محت دل جہاں سجدوں سے قاصر ہو

جینِ دل کو لے کر ان کے در جائیں تو اچھا ہو

٭

خیالوں میں کئی الفاظ نے آ کر تمنا کی !!

نی کی نعت سے ہم ھی سنور جائیں تو اچھا ہو

٭

اسی ہی آس میں رہتی ہیں اکثر منتظر آنکھیں

لاوا آئے، ہم ا چشمِ تر جائیں تو اچھا ہو

٭٭٭

۶۱

سوادِعشق نبی کیا کمال ہوتا ہے

سوادِ عشق نی کیا کمال ہوتا ہے

دیارِ روح میں حسن و جمال ہوتا ہے

٭

جو اس چراغ کا پروانہ ن کے رہ جائے

اسے نہ کھال نہ جاں کا خیال ہوتا ہے

٭

سخاوتوں کے خزانے نثار ہوتے ہیں

عقیدتوں کا سفر لازوال ہوتا ہے

٭

پھر ایک ار زیارت سے جاں مشرف ہو

لوں پہ شام و سحر یہ سوال ہوتا ہے

٭

تمام وقت کے حاکم اسے سلام کریں

تمہاری راہ میں جو پائمال ہوتا ہے

٭

گزر کے اس کی محت کے امتحانوں سے

کوئی حسین (ع) تو کوئی لال ہوتا ہے

٭

نی کا ہو کے جسے آس موت آ جائے

وہ شخص مرتا نہیں لازوال ہوتا ہے

٭٭٭

۶۲

لوں نام نبی قلب ٹھہرجائے ادب سے

لوں نام نی قل ٹھہر جائے اد سے

صد شکر یہ اعزاز ملا ہے مجھے ر سے

٭

دنیا ہی دل دی ہے مرے ذوق نے میری

میں صاح کردار ہوا تیرے س سے

٭

اے سرورِ کونین تیرے در کے تصدق

ملتا ہے یہاں س کو سوا اپنی طل سے

٭

احسان ترا کیسے ھلا دوں شہِ والا

پہچان ہوئی ر کی ہمیں تیرے س سے

٭

مشکل کوئی مشکل نہیں ٹھہری مرے آگے

مدحت شہِ لولاک کی ہاتھ آئی ہے ج سے

٭

اے خالقِ کونین دعا ہے مری تجھ سے

ٹوٹے نہ کھی راطہ اس عالی نس سے

٭

کرتا نہیں دنیا میں اصولوں کا وہ سودا

ہے آس محت جسے سلطانِ عر سے

٭٭٭

۶۳

نبی کی چشمِ کرم کے صدقے فضائے عالم میں دلکشی ہے

نی کی چشمِ کرم کے صدقے فضائے عالم میں دلکشی ہے

گلوں میں کلیوں میں رنگ و نگہت ہے چاند تاروں میں روشنی ہے

٭

جو آپ آتے نہ اس جہاں میں وجودِ کونین ھی نہ ہوتا

س آپ کے دم قدم سے آقا جہاں کی محفل سجی ہوئی ہے

٭

ہوا ہے ظلمت کا چاک سینہ گرے ہیں جھوٹے خدا زمیں پر

کرن نوت کی پھوٹتے ہی جہاں کی قسمت دل گئی ہے

٭

کمالِ اہلِ ہنر سے اعلیٰ خیال اہلِ نظر سے الا

مثال جس کی کہیں نہیں وہ جمال حسنِ محمدی ہے

٭

شیر ھی ہیں نذیر ھی ہیں سراج ھی ہیں منیر ھی ہیں

رؤف ھی ہیں رحیم ھی ہیں انہی کی دو جگ میں سروری ہے

٭

کہیں پہ یٰسین کہیں پہ طہٰ کلام حق ہے ترا قصیدہ

تری ہر اک ات حکم ری خدا کا تو لاڈلا نی ہے

٭

خدا سے جو مانگنا ہے مانگو ہے آس ہر سو عطا کی ارش

خدا نہ ٹالے گا ات کوئی کہ آج میلاد کی گھڑی ہے

٭٭٭

۶۴

دیوانہ وار مانگیے رب سے اٹھا کے ہاتھ

دیوانہ وار مانگیے ر سے اٹھا کے ہاتھ

آئیں گے پھول نعت کے تم تک صا کے ہا تھ

٭

لکھنے سے پہلے نعت کے آنکھیں ہوں ا وضو

آئیں گے ت ہی غی سے گوہر ثنا کے ، ہا تھ

٭

نتی نہیں ہے ات عطا کے نا کھی

آتا نہیں ہے کچھ ھی سوائے عطا کے ہا تھ

٭

اک چشم التفات ادھر ھی ذرا حضور(ص)

امت کی سمت ڑھ گئے مکر و ریا کے ہا تھ

٭

الفت ملی ہے آپ کی س کچھ عطا ہوا

ا کیا کمی رہی جو اٹھائیں دعا کے ہا تھ

٭

سیلا عشقِ شافعِ محشر ہے میرے گرد

"دیکھے تو مجھ کو نار جہنم لگا کے ہاتھ"

٭

وہ فیصلے خدا کی رضا آس ن گئے

جن فیصلوں کے حق میں اٹھے مصطفےٰ کے ہا تھ

٭٭٭

۶۵

فنا ہو جائے گی دنیا مہ و انجم نہیں ہوں گے

فنا ہو جائے گی دنیا مہ و انجم نہیں ہوں گے

تیری مدحت کے چرچے پھر ھی آقا کم نہیں ہوں گے

٭

ہر اک فانی ہے شے اور ذکر لا فانی تیرا ٹھہرا

تیری توصیف ت ھی ہو گی ج آدم نہیں ہوں گے

٭

توسل سے انھی کے در کھلیں گے کامرانی کے

وہ جن پر ہاتھ رکھ دیں گے انہیں کچھ غم نہیں ہوں گے

٭

کروڑوں وصف تیرے لکھ گئے اور لکھ رہے ھی ہیں

کروڑوں اور لکھیں گے مگر یہ کم نہیں ہوں گے

٭

خدا کے گھر کا رستہ مصطفےٰ کے گھر سے جاتا ہے

وہاں سے جاؤ گے تو کوئی پیچ و خم نہیں ہوں گے

٭

کریں گے کس طرح سے سامنا وہ روز محشر کا

تاؤ آس جن کے سرورِ عالم نہیں ہوں گے

٭٭٭

۶۶

تو روحِ کائنات ہے تو حسن کائنات

تو روحِ کائنات ہے تو حسن کائنات

پنہاں ہیں تیری ذات میں ر کی تجلیات

٭

ہر شے کو تیری چشمِ عنایت سے ہے ثات

ہر شے میں تیرے حسنِ مکمل کے معجزات

٭

کونین کو ہے ناز تیری ذاتِ پاک پر

احسان مند ہیں تیری ہستی کے شش جہات

٭

پژ مردہ صورتوں کو ملی تجھ سے زندگی

نقطہ وروں کو سہل ہوئیں تجھ سے مشکلات

٭

ظلمت کدوں میں نور کے چشمے ال پڑے

رحمت سے تیری ٹل گئی ظلم و ستم کی رات

٭

تاروں کو ضو فشانیاں تجھ سے ہوئیں نصی

پھولوں کی نازکی پہ تیری چشمِ التفات

٭

۶۷

ہر شے میں زندگی کی کرن تیری ذات سے

افشا یہ راز کر گئی معراج کی وہ رات

٭

اپنے دل و نگاہ کے آئینے صاف رکھ

گر دیکھنے کی چاہ ہے تجھ کو نی کی ذات

٭

کن الجھنوں میں پڑ گیا واعظ خدا سے ڈر

الا ہے تیری سوچ سے سرکار کی حیات

٭

انکی محتوں کا گزر ہے خیال میں

یونہی نہیں ہیں آس کی ایسی نگارشات

٭٭٭

۶۸

ہمیشہ مری چشمِ تر میں رہیں

ہمیشہ مری چشمِ تر میں رہیں

حضور(ص) آپ دل کے نگر میں رہیں

٭

مری سوچ کے دائروں میں رہیں

خیالات کے ام و در میں رہیں

٭

گماں فرقتوں کا میں کیسے کروں

کہ ج آپ(ص) ہر سو نظر میں رہیں

٭

مرے حرف میں میرے الفاظ میں

مرے شعر میرے ہنر میں رہیں

٭

مرے دن کی مصروفیت میں ہوں آپ

مری رات کے ہر پہر میں رہیں

٭

مری ش کی ہو اتدا آپ سے

مری انتہائے سحر میں رہیں

٭

تمنا ہے یہ آس وقتِ نزع

حضور آپ ہر سو نظر میں رہیں

٭٭٭

۶۹

ہم بے کسوں پہ فضل خدا ہے حضور (ص)سے

ہم ے کسوں پہ فضل خدا ہے حضور (ص)سے

اسلام کا شعور ملا ہے حضور (ص) سے

٭

آدم کو اپنی ذات کی پہچان تک نہ تھی

انسان آدمی تو ہوا ہے حضور (ص)سے

٭

ے کیف ے سرور تھی ے نور زندگی

اس میں سکوں کا رنگ ھرا ہے حضور(ص) سے

٭

ہوں اہلِ یتِ پاک یا اصحا مصطفےٰ

وحدت کا س نے جام پیا ہے حضور سے

٭

کشمیر ہو عراق، فلسطیں کہ کوئی ملک

ہر کلمہ گو تو آس جڑا ہے حضور (ص)سے

٭٭٭

۷۰

پیارے نبی کی باتیں کرنا اچھا لگتا ہے

پیارے نی کی اتیں کرنا اچھا لگتا ہے

انکی چاہ میں جی جی مرنا اچھا لگتا ہے

٭

ٹھنڈی ٹھنڈی مہکی مہکی ہلکی ہلکی آہٹ سے

یادِ نی کا دل میں اترنا اچھا لگتا ہے

٭

ج ہستی کی چاہت کا ہے محور تیری ذات

پل پل تیرا ہی دم ھرنا اچھا لگتا ہے

٭

میں ھی ثنا کے پھول سمیٹوں تم ھی درود پڑھو

پتھر دل سے پھوٹتا جھرنا اچھا لگتا ہے

٭

تجھ سے میری من نگری کے روشن شام و سحر

تیرے نام کی آہیں ھرنا اچھا لگتا ہے

٭

غوث، قلندر اور ولی ہیں تیرے عشق کے روگی

س کو تری توقیر پہ مرنا اچھا لگتا ہے

٭

ماتھے پر امید کا جھومر مانگ میں آس کی افشاں

ایسا مجھ کو ننا سنورنا اچھا لگتا ہے

٭٭٭

۷۱

میں غریب سے بھی غریب ہوں مرے پاس دستِ سوال ہے

میں غریب سے ھی غری ہوں مرے پاس دستِ سوال ہے

اے قسیم راحتِ دو جہاں مری سانس سانس محال ہے

٭

تو خدائے پاک کا راز داں تیرا ذکر زینتِ دو جہاں

تیرے وصف کیا میں کروں یاں تیری ات ات کمال ہے

٭

میں ہوں ے نوا تو ہے ادشہ میرا تاجِ سر تیری خاکِ پا

میں ہوں ایک ھٹکی ہوئی صدا تری ذات حسنِ مآل ہے

٭

تو ہی فرش پر تو ہی عرش پر تیرا یہ ھی گھر تیرا وہ ھی گھر

جہاں ختم ہوتا ہے ہر سفر تیرا اس سے آگے جمال ہے

٭

تیری ذات عالی شہ عر کہاں میں کہاں یہ مری طل

جو ملا، ملا وہ ترے س مرا اس میں کیسا کمال ہے

٭

نہیں تیرے عد کوئی نی ہوئی ختم تجھ پر پیمری

تیری ذاتِ حسن و جمال کی نہ نظیر ہے نہ مثال ہے

٭

میں یہ کیوں کہوں کہ غری ہوں شہ دوسرا کے قری ہوں

میں تو آس روشن نصی ہوں غمِ مصطفےٰ مری ڈھال ہے

٭٭٭

۷۲

سر جھکایا قلم نے جو قرطاس پر پھول اس کی زباں سے بکھرنے لگے

سر جھکایا قلم نے جو قرطاس پر پھول اس کی زاں سے کھرنے لگے

مدحتِ مصطفےٰ تیرا احسان ہے تجھ سے کیا کیا مقدر سنورنے لگے

٭

یہ تو ان کی عنایات کی ات ہے ورنہ کیا ہوں میں کیا میری اوقات ہے

جس کا دنیا میں پرسان کوئی نہ تھا اس کے دامن میں تارے اترنے لگے

٭

یونہی مجھ پر کرم اپنا رکھنا سدا اے مرے چارہ گر اے شہ دوسرا

تیری چشمِ کرم جس طرف کو اٹھی اس طرف نور سینوں میں ھرنے لگے

٭

قط و ادال غوث و ولی متقی س کی محسن ہے نورِ تجلی تیری

روشنی تیرے کردار کی پا کے س سینہ ٔ سنگ کو موم کرنے لگے

٭

عشق سچا اگر ہو تو دیدار کی قید کوئی نہیں فاصلے کچھ نہیں

ہو گئی جن کے دل کو صارت عطا لمحہ لمحہ وہ دیدار کرنے لگے

٭

کچھ عج وضع سے کر رہے ہیں سر تیرے عشاق س اپنے شام و سحر

جیتا دیکھا کسی کو تو جینے لگے مرتا دیکھا کسی کو تو مرنے لگے

٭

اے خدا آس کو وہ عطا نعت کر جو منور کرے س کے قل و نظر

ے سہاروں کو تسکین جو خش دے غم کے ماروں کے جو زخم ھرنے لگے

٭٭٭

۷۳

لب کشائی کو اذنِ حضوری ملا چشمِ بے نور کو روشنی مل گئی

لب کشائی کو اذنِ حضوری ملا چشمِ ے نور کو روشنی مل گئی

ہاتھ اٹھاوں میں ا کس دعا کے لیے انکی نست سے ج ہر خوشی مل گئی

٭

ذوق میرا عادت میں ڈھلنے لگا زاویہ گفتگو کا دلنے لگا

ساعتیں میری پرکیف ہونے لگیں دھڑکنوں کو مری ندگی مل گئی

٭

ناز اپنے مقدر پہ آنے لگا ہر کوئی ناز میرے اٹھانے لگا

دھل گیا آئینہ میرے کردار کا ج سے ہونٹوں کو نعتِ نی مل گئی

٭

ان کی چشمِ عنایت کا اعجاز ہے ورنہ کیا ہوں میں کیا میری پرواز ہے

خامیاں میری نتی گئیں خویاں زندگی کو مری زندگی مل گئی

٭

میری تقدیر گڑی نائی گئی ات جو ھی کہی کہلوائی گئی

میں نے تو صرف تھاما قلم ہاتھ میں جانے کیسے کڑی سے کڑی مل گئی

٭

زندگی ج سے ان کی پناہوں میں ہے ایک تاندگی سی نگاہوں میں ہے

مجھ کو اقرار ہے اس کے قال نہ تھا ذاتِ وحدت سے جو روشنی مل گئی

٭

مدحتِ مصطفےٰ ہے وہ نورِ میں جس کا ثانی دو عالم میں کوئی نہیں

آس اس کی شعاعوں کے ادراک سے راہ ھٹکوں کو ھی رہری مل گئی

٭٭٭

۷۴

اپنی اوقات کہاں، ان کے سبب سے مانگوں

اپنی اوقات کہاں، ان کے س سے مانگوں

ر ملا ان سے تو کیوں ان کو نہ ر سے مانگوں

٭

ان کی نست ہے ہت ان کا وسیلہ ہے ہت

کیوں میں کم ظرف نوں ڑھ کے طل سے مانگوں

٭

جس ضیا سے صدا جگ مگ ر ہے دنیا من کی

اس کی ہلکی سی رمق ماہِ عر سے مانگوں

٭

آندھیاں جس کی حفاظت کو رہیں سرگرداں

پیار کا دیپ وہ ازارِ اد سے مانگوں

٭

کوئی اسلو سلیقہ نہ قرینہ مجھ میں

سوچتا ہوں انھیں کسی طور سے، ڈھ سے مانگوں

٭

کارواں نعت کا اے کاش رواں یوں ہی رہے

اور میں نِت نئے عنوان اد سے مانگوں

٭

آس آاد رہے شہر مری الفت کا

ہر گھڑی اس کی خوشی دستِ طل سے

٭٭٭

۷۵

جمال عکس محمدی سے فضائے عالم سجی ہوئی ہے

جمال عکس محمدی سے فضائے عالم سجی ہوئی ہے

قرارِ جاں ن کے زندگی میں انہی کی خوشو سی ہوئی ہے

٭

خدائے واحد کی ن کے رہاں حضور آئے ہیں اس جہاں میں

دکھوں سے جلتی ہوئی زمیں پھر ہر ایک غم سے ری ہوئی ہے

٭

نجانے کیسا کمال دیکھا نی(ص) کا جس نے جمال دیکھا

حواس گم سم نگاہ حیراں زاں کو چپ سی لگی ہوئی ہے

٭

سمندروں کی تہوں سے لے کر مقام سدرہ کی رفعتوں تک

مرے نی کے کرم کی چادر ہر اک جہاں پر تنی ہوئی ہے

٭

تمام چاہت کے روگیوں کا عجی ہم نے کمال دیکھا

جدا جدا صورتیں ہیں لیکن دلوں کی دھڑکن جڑی ہوئی ہے

٭

وہی حقیقت میں زندگی ہے وہی حقیقت میں ندگی ہے

جو میرے سرکار کی محت کے راستوں پر پڑی ہوئی ہے

٭

انگشتری میں نگینہ جیسے زمیں کے دل پر مدینہ جیسے

حضور(ص) اس طرح آس تیری، مری نظر میں جڑی ہوئی ہے

٭٭٭

۷۶

رنگ لائی مرے دل کی ہر اک صدا لوٹنے زندگی کے خزینے چلا

رنگ لائی مرے دل کی ہر اک صدا لوٹنے زندگی کے خزینے چلا

میرے ر نے کیا مجھ کو منص عطا میں مدینے چلا میں مدینے چلا

٭

میری مدت کی یہ آس پوری ہوئی رشک کرنے لگا مجھ پہ ہر آدمی

ہونے والی ہے ا زندگی، زندگی سیکھنے زندگی کے قرینے چلا

٭

میرے گھر ملنے والوں کی یلغار ہے آج س کو مری ذات سے پیار ہے

آرزوؤں کے غنچوں کی مہکار ہے کس مقدس مارک مہینے چلا

٭

ہر کوئی کہہ رہا ہے کہ میرے لیے جا کے روضے پہ رکھنا دعا کے دیے

اور یہ کہنا کہ چشم کرم اک ادھر ہر کوئی جام کوثر کے پینے چلا

٭

سوچتا ہوں سفر کا ارادہ تو ہے شوق جانے کا ھی کچھ زیادہ تو ہے

عشق کا معصیت پہ لادہ تو ہے پر میں کیا ساتھ لیکر خزینے چلا

٭

میں نے پورے کیے کیا حقوق ا لعاد اور مٹائے ہیں کیا جگ سے فتنے فساد

کیا مسلماں میں پیدا کیا اتحاد کون سا مان لے کر مدینے چلا

٭

آس کیا منہ دکھاؤں گا سرکار کو اپنے ہمدرد کو اپنے غم خوار کو

کیوں گراؤں میں فرقت کی دیوار کو کس لیے ہجر کے زخم سینے چلا

٭٭٭

۷۷

مرے دل میں یونہی تڑپ رہے مری آنکھ میں یونہی نم رہے

مرے دل میں یونہی تڑپ رہے مری آنکھ میں یونہی نم رہے

مری ہر نگارشِ شوق پر اے کریم تیرا کرم رہے

٭

میں لکھوں جو نعت حضور(ص) کی دلِ مضطر کے سرور کی

کھی چشم ناز لند ہو کھی سر نیاز سے خم رہے

٭

مری سانس سانس مہک اٹھے مجھے روشنی سی دکھائی دے

میرا حرف حرف دعا نے مری آہ آہ قلم رہے

٭

یہ یقین ہے جو میں مر گیا تو کہیں گے س یہ ملائکہ

یہ ہے شاعرِ شاہِ دوسرا ذرا اس کا پاس، ھرم رہے

٭

یہ دعا ہے آس حضور(ص) کا کھی دل سے پیار نہ ہو جدا

مری زندگی کی جین پر سدا ان کا نام رقم رہے

٭٭٭

۷۸

آپ(ص) سے حسن کائنات آپ کہاں کہاں نہیں

آپ(ص) سے حسن کائنات آپ کہاں کہاں نہیں

آپ کا ذکر نہ ہو جہاں ایسا کوئی جہاں نہیں

٭

ایک جاں سرور آگ سلگی ہے میری ذات میں

ہے یہ عجی ماجرا راکھ نہیں دھواں نہیں

٭

جن فیصلوں پہ آپ کی مہر ثت ہو گئی

اس کے عد ا خدا کوئی ھی این و آں نہیں

٭

اوصافِ پاک آپ کے جس سے تمام ہوں یاں

ایسا کوئی قلم نہیں ایسی کوئی زاں نہیں

٭

واعظ کی ات ھی پرکھ اپنے ھی من کی ات سن

جس سر سے اٹھ گئے وہ ہاتھ اس کی کہیں اماں نہیں

٭

حضرت لال دے گئے آس یہ ہم کو فلسفہ

جس کے نا ھی ہو سحر، ایسی اذاں، اذاں نہیں

٭٭٭

۷۹

ہے یہ دربارِ نبی خاموش رہ

ہے یہ درارِ نی خاموش رہ

چپ کو ھی ہے چپ لگی خاموش رہ

٭

ولنا حدِ اد میں جرم ہے

خامشی س سے ھلی خاموش رہ

٭

ان کے در کی مانگ ر سے چاکری

تجھ کو جنت کی پڑ ی خاموش رہ

٭

ہے ذریعہ ہترین اظہار کا

اک زانِ خامشی خاموش رہ

٭

دل سے ان کو یاد کر کے دیکھ تو

پاس ہیں وہ ہر گھڑی خاموش رہ

٭

ھیگی پلکیں کر نہ دیں رسوا تجھے

ضط کر دیوانگی خاموش رہ

٭

جیسے کی ہے میرے آقا نے سر

ویسے تو کر زندگی خاموش رہ

٭

۸۰