آفتاب ولایت

آفتاب ولایت0%

آفتاب ولایت مؤلف:
قسم: امیر المومنین(علیہ السلام)
صفحے: 272

آفتاب ولایت

یہ کتاب برقی شکل میں نشرہوئی ہے اور شبکہ الامامین الحسنین (علیہما السلام) کے گروہ علمی کی نگرانی میں اس کی فنی طورپرتصحیح اور تنظیم ہوئی ہے

مؤلف: علی شیر حیدری
قسم: صفحے: 272
مشاہدے: 5793
ڈاؤن لوڈ، اتارنا: 523

تبصرے:

آفتاب ولایت
کتاب کے اندر تلاش کریں
  • شروع
  • پچھلا
  • 272 /
  • آگے
  • آخر
  •  
  • ڈاؤن لوڈ، اتارنا HTML
  • ڈاؤن لوڈ، اتارنا Word
  • ڈاؤن لوڈ، اتارنا PDF
  • مشاہدے: 5793 / ڈاؤن لوڈ، اتارنا: 523
سائز سائز سائز
آفتاب ولایت

آفتاب ولایت

مؤلف:
اردو

یہ کتاب برقی شکل میں نشرہوئی ہے اور شبکہ الامامین الحسنین (علیہما السلام) کے گروہ علمی کی نگرانی میں اس کی فنی طورپرتصحیح اور تنظیم ہوئی ہے

علی علیہ السلام کی تعریف معاویہ کی زبان سے

جب محصن ضبی معاویہ کے پاس پہنچا تو معاویہ نے اُس سے پوچھا کہ تم کہاں سے آرہے ہو؟اُس نے جواب دیا کہ میں(معاذاللہ) کنجوس ترین شخص علی ابن ابی طالب کے پاس سے آرہا ہوں۔ یہ سن کر معاویہ اُس پر چلّایا اور کہا :کیا تم اُس کو بخیل ترین شخص کہہ رہے ہو جس کے پاس اگر ایک گھر سونے(طلاء) سے بھرا ہوا ہو اور دوسرا گھر چاندی سے بھرا ہوا ہو تو وہ بیکسوں کو زیادہ سونا بانٹ دے گا اور پھر طلاء اور چاندی کو مخاطب کرکے کہے گا کہ:

یٰاصَفْرٰاءُ وَیٰا بَیْضٰاءُ غُرِّی غَیْرِی أَبِی تَعَرَّضْتِ اَمْ اِلیَّ تَشَوَّقْتِ؟هَیهٰاتَ هَیهٰاتَ قَدْ طَلَّقْتُکِ ثَلٰثاً لاٰ رَجْعَةَ فِیْکَ

”اے طلاء زرد اور سفید چاندی! میرے کسی غیر کو دھوکہ دو، کیا اس طرح تم میری مخالفت کررہی ہو یا مجھے حوصلہ دے رہی ہو۔ افسوس ہے، افسوس ہے، میں نے تجھے تین مرتبہ طلاق دے دی ہے جس کے بعد رجوع ممکن نہیں“۔

حوالہ کتاب”چراشیعہ شدم“،صفحہ۲۲۷۔

(ب)۔ شہادت علی پر معاویہ کا عکس العمل

مغیرہ نے کہا: جب علی علیہ السلام کی شہادت کی خبر معاویہ تک پہنچی ،وہ گرمیوں کے دن تھے اور معاویہ اپنی بیوی فاختہ دختر قرظہ کے ساتھ تھا۔ معاویہ اپنی جگہ سے اٹھا اور کہا:

”اِنَّالِلّٰهِ وَاِنَّا اِلَیْهِ راجِعُوْن“

”ہم اللہ ہی کیلئے ہیں اور اُسی کی طرف پلٹ کر جانے والے ہیں“۔

پھر کہنے لگا کہ کیا عقل و دانش اور خیر کا منبع چلاگیا؟

معاویہ کی بیوی نے اُس سے کہا کہ کل تک تو تم علی کی طرف نیزے پھینک رہے تھے اور آجاِنَّالِلّٰه وَاِنَّا اِلَیْهِ راجِعُوْن پڑھ رہی ہو؟معاو یہ نے اُسے جواب میں کہا کہ تم نہیں جانتیں کہ کیا علم و فضیلت اور تجربہ ہاتھ سے چلا گیا۔

۲۴۱

حوالہ

کتاب”بوستان معرفت“،صفحہ۶۶۰۔یہ نقل کیا گیا ہے ابن عساکر کی کتاب”تاریخ

امیر المومنین علیہ السلام،جلد۳،صفحہ۴۰۵،۴۰۹،حدیث۱۵۰۵،۱۵۰۷اور کتاب مناقب خوارزمی سے باب ۲۶،صفحہ۲۸۳اور ابن کثیر کتاب البدایہ والنہایہ،جلد۸،صفحہ۱۵،آخر وقایع،سال چہل، ہجری و دیگران۔

معاویہ کی تنبیہ مروان بن حکم کو

جاحظ کتاب المحاسن والاضداد میں لکھتا ہے کہ ایک دن حضرت امام حسن مجتبیٰ علیہ السلام معاویہ کی محفل میں گئے۔ اس محفل میں عمروعاص، مروان بن حکم اور مغیرہ بن شعبہ اور دوسرے افراد پہلے سے موجود تھے۔جس وقت امام حسن علیہ السلام وہاں پہنچے تو معاویہ نے اُن کا استقبال کیا اور اُن کو منبر پر جگہ دی۔ مروان بن حکم نے جب یہ منظر دیکھا تو حسد سے جل گیا۔ اُس نے اپنی تقریر کے دوران امام حسن علیہ السلام کی توہین کی ۔ امام حسن علیہ السلام نے فوراً اُس خبیث انسان کو منہ توڑ جواب دیا۔ ان حالات کو دیکھ کر معاویہ اپنی جگہ سے بلند ہوا اور مروان بن حکم کو مخاطب کرکے کہنے لگا:

”قَدْ نَهَیْتُکَ عَنْ هٰذا الرَّجُل فَلَیْسَ اَ بُوْهُ کَاَبِیْکَ وَلَا هُوَ مِثْلُکَاَنْتَ اِبْنُ الطَّرِیْد الشَرِیْد،وَهُوَ اِبْنُ رَسُوْلِ اللّٰهِ الکریم ۔

”میں نے تجھے اس مرد(کی توہین) کے بارے میں منع کیا تھا کیونکہ نہ اُس کا باپ تمہارے باپ جیسا ہے اور نہ وہ خود تمہارے جیسا ہے۔ تم ایک مردود و مفرور باپ کے بیٹے ہو جبکہ وہ رسول خدا کا بیٹا ہے“۔

حوالہ کتاب”المحاسن والاضداد“،تالیف:جاحظ(از علمای اہل سنت)،صفحہ۱۸۱۔

معاویہ کا حضرت ابوبکر اور حضرت عمر پر انتقاد

ماکتبه معاویةُ اِلٰی مُحَمَّدِ بنِ اَبِی بَکر:فَقَد کُنَّا اَبُوکَ مَعَنَافِی حَیَاةٍ من نبیِّنَا،نَرٰی حَقَّ عَلِیِ بنِ اَبِی طَالِبٍ لَنَا لَازِماً،وفَضْلَهُ عَلَیْنَا مُبْرَزاً،فَلَمَّا اخْتٰارَهُ اللّٰهُ لِنَبِیِّهِ، فَکَانَ اَبُوکَ وفٰارُوقُةُ اَوَّلَ مَنِ ابْتَزَّهُ حَقَّهُ وَخٰالَفَهُ عَلٰی اَمْرِهِ

۲۴۲

”رسول خدا کی حیات طیبہ کے زمانہ میں مَیں اور تیرا باپ(ابوبکر) علی علیہ السلام کے حق کو لازم اور واجب سمجھتے تھے اور اُن کے فضائل و عظمت ہمارے اوپر بالکل واضح تھی۔ لیکن جس وقت خدا نے علی علیہ السلام کو اپنے پیغمبر کے لئے چن لیا(بعنوان امام اور مولائے مسلمانان) تو اُس وقت تیرے باپ نے اور اُس کے فاروق(عمر بن خطاب) نے سب سے پہلے علی علیہ السلام کے حق کو پامال کردیا اور اُن کے فرمان کی مخالفت کی“۔

حوالہ

مولف: ابن عساکر، کتاب حال امام علی علیہ السلام،جلد۲،صفحہ۴۳۲پاء ورق۔

عمروعاص کی فضیلت علی پرمعاویہ سے گفتگو

”مگر یہ کہ میں عظمت علی علیہ السلام کو احترام سے یاد کرتا ہوں۔ لیکن عظمت علی علیہ السلام کو یاد کرنے میں تو مجھ سے بھی زیادہ شدید ہے۔ مگر فرق یہ ہے کہ تو اسے چھپاتا ہے اور میں اسے برملا کہتا ہوں“۔

حوالہ

کتاب اسرار آل محمد،مولف: سلیم بن قیس،صفحہ۲۰۳،اشاعت۱۲۔

عمروعاص کے اشعار علی کی شان میں

عمروعاص نے معاویہ کے نام خط لکھا جس میں درج ذیل اشعار لکھے:

کتب عمروبن العاص الی معاویہ

و کم قد سمعنا من المصطفیٰ

وصایا مُخَصَّصَةً فی علیٍّ

۲۴۳

و فی یوم خمٍّ رقیٰ مِنبراً

و بلَّغ والصَّحبُ لم تَرحل

فأمنَحَه اِمرَةَ المومنین

مِن اللّٰهِ مستخلِفَ المنحل

و فی کفِّه کفُّه مُعْلِناً

یُنادی باَمرِ العزیز العلیّ

وقال: فَمَن کنتُ مولیٰ له

علیٌ له الیومَ نِعْمَ الوَلی

”علی علیہ السلام کے بارے میں رسول خدا کے بہت سے ارشادات وسفارشات ہم نے سنیں۔ غدیر خم کے روز پیغمبر خدا منبر پر تشریف لے گئے اور (ولایت علی علیہ السلام کی)تبلیغ کی۔ اس حالت میں کہ سب آپ کے ہمراہیوں نے ابھی کوچ نہیں کیا تھا(یعنی وہاں موجود تھے)۔ علی کو خدا کی طرف سے امیر المومنین مقرر کیا۔اُس روز علی کا ہاتھ پیغمبر کے ہاتھ میں تھا اور لوگوں کو واضح طور پر خدا کے فرمان کی طرف متوجہ کررہے تھے اور فرمارہے تھے کہ جس کا میں مولیٰ ہوں اُس کا یہ علی مولا ہے“

حوالہ

ابن عساکر،کتاب ”امام علی علیہ السلام“ ،صفحہ۸۹،فٹ نوٹ(شرح محمودی)۔

۲۴۴

اعتراف سعد بن ابی وقاص

جب معاویہ اپنے بیٹے یزید کیلئے بیعت حاصل کرنے کیلئے وارد مکہ ہوا۔ اُس نے دارالندوہ میں ایک کمیٹی تشکیل دی جس میں چند اصحاب پیغمبر اسلام بھی تھے۔ معاویہ نے اپنے کلام کا آغاز حضرت علی علیہ السلام کی بدگوئی سے کیا۔ بعد میں وہ اس انتظار میں رہا کہ سعد بن ابی وقاص بھی اپنے کلام کا آغاز علی علیہ السلام کی بد تعریفی ہی سے کرے گا۔ لیکن سعد نے برخلاف توقع کہا کہ میں ہمیشہ حضرت علی علیہ السلام کی زندگی کے تین درخشاں نکات کو یاد کرتا رہتا ہوں اور میں دل کی گہرائی سے کہتا ہوں کہ اے کاش! مجھے یہ فضیلتیں میسر آجائیں اور یہ تین فضیلتیں یہ ہیں:

۱۔ پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے علی علیہ السلام سے ارشاد فرمایا کہ یا علی ! تجھے مجھ

سے وہی نسبت ہے جو ہارون کو موسیٰ سے تھی، سوائے اس کے کہ میرے بعد کوئی نبی نہیں آئے گا۔

۲۔ جنگ خیبر میں ایک روز پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ کل میں علم اُس کو

دوں گا جس کو خدااور اُس کا رسول دوست رکھتے ہوں گے۔ اللہ اُس کے ہاتھ پر فتح عطا کرے گا اور وہ غیر فرار ہوگا۔

۳۔ نجران کے عیسائیوں سے مباہلہ کے روز پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنے اردگرد علی علیہ السلام ، فاطمہ سلام اللہ علیہا ،حسن علیہ السلام اور حسین علیہ السلام کو جمع کیا اور فرمایا:

”پروردگار! یہ میرے اہل بیت ہیں“۔

حوالہ

۱۔ کتاب”الھیات و معاف اسلامی“، مولف:استاد جعفر سبحانی، صفحہ۳۹۹،نقل از صحیح

مسلم،جلد۷،صفحہ۱۲۰۔

۲۔ کنز العمال، جلد۱۳،صفحہ۱۶۲،۱۶۳(موسسة الرسالہ،بیروت، اشاعت پنجم)۔

۳۔ ابن کثیر، کتاب البدایہ والنہایہ،جلد۷،صفحہ۳۴۰،باب فضائل علی علیہ السلام۔

۲۴۵

سعد بن ابی وقاص سے تین روائتیں

(ا)۔ ایک دفعہ معاویہ سفر حج پر تھا کہ سعد بن ابی وقاص اُس کو ملا۔ گفتگو کے دوران ذکر علی

بھی آگیا۔ معاویہ نے علی علیہ السلام کو بُرابھلا کہا۔ اس پر سعد غصے میں آگیا اورکہنے لگا :کیا تو اُس شخص کو بُرا بھلا کہہ رہا ہے جس کے بارے میں پیغمبر خدا کہتے تھے کہ جس کامیں مولیٰ ہوں، اُس کا یہ میرا چچازاد بھائی علی بھی مولیٰ ہے اور میں نے یہ بھی سنا ہے کہ آپ نے فرمایاکہ یا علی ! تو میرے نزدیک وہی منزلت رکھتا ہے جو ہارون علیہ السلام کی موسیٰ علیہ السلام کے نزدیک تھی،سوائے اس کے کہ میرے بعد کوئی پیغمبر نہیں آئیگا اور پھر پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے یہ بھی فرمایا کہ کل(روز خیبر) میں پرچم اُس کو دوں گا جس کو خدا اور اُس کا رسول دوست رکھتے ہیں۔

حوالہ

کتاب”آثار الصادقین“جلد۱۴،صفحہ۴۶۲،نقل از الغدیر،جلد۱،صفحہ۳۹،والغدیر

از سنن ابن ماجہ،جلد۱،صفحہ۳۰۔(یہ نکتہ قابل توجہ ہے کہ بعض اوقات معاویہ علی علیہ السلام کو بُراکہتا تھا۔ یہ اُس کے انتہائی کینہ کی وجہ سے تھا لیکن بعض اوقات فضائل علی علیہ السلام بیان بھی کرتا تھا۔ یہ اس واسطے تھا کہ علی علیہ السلام کے فضائل چھپائے بھی نہ چھپ سکتے تھے)۔

(ب)۔ ابو یعلی و بزار سعد بن ابی وقاص سے روایت کرتے ہیں کہ رسول خدا نے فرمایا:

”مَنْ آذیٰ عَلِیاً فَقَدْ آذٰانِیْ“

”جس نے علی کو اذیت دی، اُس نے گویا مجھے اذیت دی“۔

حوالہ کتاب”مصباح الموحدین“،صفحہ۵۵۔

۲۴۶

(ج)۔ مسلم، سعد بن ابی وقاص سے روایت کرتے ہیں کہ جب یہ آیت نازل ہوئی:

( نَدْعُ اَبْنٰاءَ نٰا وَاَبْنٰاءَ کُمْ )

”ہم اپنے بیٹوں کو بلاتے ہیں، تم اپنے بیٹوں کو بلاؤ“

رسول خدا نے علی ،فاطمہ ،حسن اور حسین کو بلایااور کہا:

”اَلَّلهُمَّ هٰولاٰءِ اَهْلُبَیْتِیْ“

”پروردگار یہ میرے اہل بیت ہیں“۔

حوالہ کتاب”مصباح الموحدین“،صفحہ۵۲۔

ابن سعد سے ایک روایت

ابن سعد حضرت علی سے روایت کرتے ہیں کہ آپ سے پوچھا گیا کہ یہ کس طرح ممکن ہے کہ آپ تمام اصحاب سے زیادہ احادیث جانتے ہیں تو جواب میں علی علیہ السلام نے فرمایا:

”اِنِّی کُنْتُ اِذٰاسَأَ لْتُهُ أَ نْبَأَ نِیْ وَاِذٰا سَکَتُّ اِبْتَدَأَنِیْ“

”جس وقت بھی میں نے آنحضرت سے پوچھا تو آپ نے مجھے خبر دی اورجب میں خاموش ہوجاتا تو حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم بات شروع کردیتے“۔

حوالہ کتاب”مصباح الموحدین“،صفحہ۵۵۔

۲۴۷

مروان بن حکم کی امام سجاد سے گفتگو

ایک دن مروان بن حکم(جو یزید بن معاویہ کے بعد خلافت پر بیٹھا) امام سجاد علیہ السلام سے ملا اور اُس نے امام علیہ السلام سے کہا کہ مسلمانوں میں سے کسی نے بھی آپ کے دوست سے زیادہ ہمارے دوست کی طرفداری نہیں کی(یعنی کسی نے بھی علی علیہ السلام سے زیادہ عثمان کی طرفداری نہیں کی)۔ امام سجاد علیہ السلام نے فرمایا کہ پھر کیوں ہمیں اس نسبت سے برائی دیتے ہو؟مروان نے جواب دیا کہ ہماری حکومت کی بقا اس کے بغیر ممکن نہیں۔

حوالہ جات بوستان معرفت، صفحہ۶۶۴،نقل از ابن عساکر، کتاب تاریخ امیر المومنین علیہ السلام،جلد۳صفحہ۱۲۷،حدیث۱۱۴۹اور بلاذری، انساب الاشراف،ج۲،ص۱۸۴،

حدیث۲۲۰ابن ابی الحدید،شرح نہج البلاغہ،جلد۱۳،صفحہ۲۲۰،شرح خطبہ۲۳۸۔

مروان اور ولید بن عقبہ کی شجاعت علی پر گفتگو

جنگ صفین میں معاویہ بن ابی سفیان نے کہا کہ خدا کی قسم! میں چاہتا ہوں کہ تم حضرت علی علیہ السلام کو تیروں کی بارش کرکے زخمی کردو تاکہ اُن کے پاؤں اکھڑ جائیں اور لوگ اُن کی طرف سے آسودہ خیال ہوجائیں۔ اس وقت مروان نے کہا:خدا کی قسم! اے معاویہ! تمہیں ہمارا وجود بُرالگتا ہے(تم چاہتے ہو کہ ہمیں موت کی وادی میں دھکیل دو)۔ اس واسطے تم ہمیں ایک خطرناک ترین سانپ اور دلیر ترین شیر کو مارنے کا مشورہ دے رہے ہو۔ وہ غصے میں اپنی جگہ سے اٹھا ۔ولید بن عقبہ جو وہاں موجود تھا، نے چند اشعار پڑھے جن میں سے دو اشعار ذیل میں لکھے جارہے ہیں:

أَتأ مُرُنٰا بِحَیَّةِ بَطْنِ وَادٍ

یُنٰاحُ لَنٰابِهِ اَسَدٌ مَهابٌ

۲۴۸

کَاَنَّ الْخَلْقَ لَمّٰا عٰایَنُوْهُ

خِلاٰلَ النَّقْعِ لَیْسَ لَهُمْ رِقٰابٌ

”کیا تم ہمیں جنگل کے ایسے سانپ کو مارنے کا حکم دے رہے ہو جس کے ڈسنے سے جنگل کا شیر ببر بھی محفوظ نہیں۔ وہ بھی آہ و زاری کررہا ہے۔ کہتے ہیں کہ اُسے اگر میدان جنگ میں کوئی خاک و غبار میں دیکھ لے تو اُس کے خوف سے کوئی گردن سلامت نہیں رہے گی“۔

حوالہ

کتاب”آثارالصادقین“،جلد۹،صفحہ۳۰۱،نقل از سفینہ، جلد۱،صفحہ۶۹۰۔

قاتل علی ،عبدالرحمٰن بن ملجم کے تاثرات

عبدالرحمٰن ابن ملجم مرادی ولایت علی ابن ابی طالب علیہ السلام کا اس قدر قائل تھاکہ علامہ مجلسی بحارالانوار کی جلد۹میں لکھتے ہیں کہ جب یہ یمن سے کوفہ آیا اور امیر المومنین علیہ السلام کی خدمت میں پہنچا تو اس نے ایک قصیدہ حضرت علی علیہ السلام کی شان میں لکھا۔ اس نے وہیں قیام کیا۔ اتفاق سے بیمار پڑگیا تو خود حضرت علی علیہ السلام اُس کی تیمار داری اور خدمت کیلئے اُس کے پاس جاتے رہے۔ جنگ نہروان میں ابن ملجم حضرت علی علیہ السلام کی فوج میں شامل تھا اور ایک دستہ فوج کا سالار تھا۔ ایک دفعہ عبدالرحمٰن ابن ملجم حضرت علی علیہ السلام کی خدمت میں حاضر ہوا تو آپ نے اُسے اطلاع دی کہ اے عبدالرحمٰن! تو میرا قاتل ہوگا تو ایک دفعہ یہ گھبرا گیا اور کہنے لگا کہ یا امیر المومنین ! مجھے ابھی اپنی تلوار سے قتل کردیں تاکہ میں اس جرم کا ارتکاب نہ کرسکوں۔ آپ نے قصاص قبل از قتل کی مذمت فرمائی۔

یہی عبدالرحمٰن ابن ملجم بعد میں دوخارجیوں کے زیر اثر آگیااورقطامہ نامی ایک بدکار عورت بنام قطامہ کے عشق میں مبتلا ہوکر اپنے ہاتھ علی علیہ السلام کے خون سے رنگ لئے۔

پس قاتل علی علیہ السلام بھی آپ کے فضائل و کمالات سے پوری طرح آگاہ تھا معترف تھا۔

۲۴۹

فہرست کتب جن سے اس کتاب میں استفادہ کیا گیا ہے

فہرست کتب اہل سنت

-۱ تفسیر کبیر -------- فخر رازی

-۲ تفسیر شواہد التنزیل --------- حافظ حسکانی

-۳ تفسیر الدرالمنثور ------- سیوطی

-۴ تفسیر ابن کثیر ------ ابن کثیر

-۵ تفسیر کشاف ------- زمخشری

-۶ تفسیر طبری -------- طبری

-۷ تفسیر بیضاوی -------- بیضاوی

-۸ تفسیر اسباب النزول -------- واحدی نیشاپوری

-۹ تفسیر روح المعانی -------- شہاب الدین آلوسی

-۱۰ تفسیر فتح القدیر ------ قاضی شوکانی

-۱۱ الکشف والبیان ---- -- - ثعلبی

-۱۲ انساب الاشراف -------- بلاذری

-۱۳ کفایة الطالب -------- گنجی شافعی

-۱۴ ینابیع المودة -------- شیخ سلیمان قندوزی حنفی

-۱۵ مجمع الزوائد -------- ہیثمی

۲۵۰

-۱۶ فرائد السمطین -------- علامہ حموینی

-۱۷ البدایہ والنہایہ -------- ابن کثیر

-۱۸ مناقب امیر المومنین -------- ابن مغازلی

-۱۹ کنزالعمال ------- متقی ہندی

-۲۰ تاریخ بغداد ------- خطیب بغدادی

-۲۱ تاریخ دمشق -------- ابن عساکر

-۲۲ تاریخ الخلفاء -------- سیوطی

-۲۳ مناقب امیر المومنین -------- خوارزمی

-۲۴ الصواعق المحرقہ -------- ابن حجر

-۲۵ نورالابصار --------- شبلنجی

-۲۶ اللئالی المصنوعہ --------- سیوطی

-۲۷ اسد الغابہ -------- ابن اثیر

-۲۸ ما نزل من القرآن فی علی --------- ابو نعیم اصفہانی

-۲۹ الفصول المہمة --------- ابن صباغ مالکی

-۳۰ المستدرک --------- حاکم نیشا پوری

-۳۱ المسند -------- احمد بن حنبل

-۳۲ المعجم الکبیر --------- طبرانی

-۳۳ تہذیب الکمال -------- حافظ المزی

۲۵۱

-۳۴ الفضائل --------- قطیفی

-۳۵ میزان الاعتدال -------- ذہبی

-۳۶ استیعاب -------- ابن عبدالبر

-۳۷ تذکرة الخواص -------- سبط بن الجوزی

-۳۸ تاریخ الاسلام -------- ذہبی

-۳۹ الجامع لا حکام القرآن -------- قرطبی

-۴۰ الفضائل ------- احمد بن حنبل

-۴۱ الاصابہ -------- ابن حجر عسقلانی

-۴۲ خصائص امیر المومنین --------- نسائی

-۴۳ ریاض النظرہ -------- محب الدین طبری

-۴۴ فتح الباری -------- ابن حجر عسقلانی

-۴۵ مقتل الحسین --------- خوارزمی

-۴۶ کنزالفوائد -------- کراجکی

-۴۷ خصائص الوحی المبین --------- یحییٰ بن بطریق

-۴۸ مناقب آل نبی --------- رشید الدین

-۴۹ احیاء العلوم --------- ثعلبی

-۵۰ جمع الجوامع -------- سیوطی

-۵۱ سنن ابن ماجہ -------- محمد بن یزید قزوینی

-۵۲ صحیح ترمذی -------- محمد بن عیسیٰ ترمذی

۲۵۲

-۵۳ صحیح بخاری --------- محمد بن اسماعیل بخاری

-۵۴ عمدة القاری -------- ابن احمد حلبی عینی

-۵۵ السنن الکبریٰ -------- بہیقی

-۵۶ شرح نہج البلاغہ -------- ابن ابی الحدید

-۵۷ ذخائر العقبی -------- محب الدین طبری

-۵۸ لسان المیزان --- ----- ابن حجر عسقلانی

-۵۹ حلیة الاولیاء --------- ابونعیم اصفہانی

-۶۰ الجامع الصغیر --------- سیوطی

-۶۱ الاتحاف بحب الاشراف -------- شبراوی

-۶۲ مثنوی معنوی -------- مولوی

-۶۳ المحاسن والاضداد --------- جاحظ

-۶۴ امام علی بن ابی طالب --------- عبدالفتاح عبدالمقصود

-۶۵ بیست و پنج سال سکوت علی علیہ السلام -------- فواد فاروقی

-۶۶ علی ،چہرئہ درخشان اسلام -------- ابن ابی الحدید

-۶۷ معجم الادباء --------- یاقوت حموی

۲۵۳

فہرست کتب اہل شیعہ

-۱ تفسیر المیزان --------- مرحوم علامہ طباطبائی

-۲ تفسیر مجمع البیان -------- شیخ طبرسی

-۳ تفسیر البرہان -------- علامہ بحرانی

-۴ تفسیر نمونہ -------- جمیع از نویسندگان

-۵ کمال الدین ---------- شیخ صدوق

-۶ الغدیر ---------- مرحوم علامہ امینی

-۷ آثار الصادقین ---------- شیخ صادق احسان بخش

-۸ جلاء العیون ---------- علامہ مجلسی

-۹ آئمہ اثنا عشر ---------- احمد بن عبداللہ بن عیاشی جوہری

-۱۰ شیعہ در اسلام ---------- علامہ طباطبائی

-۱۱ ولاء ہاوولایتہا ---------- علامہ شہید مرتضیٰ مطہری

-۱۲ سیری در صحیحین ---------- محمد صادق نجمی

-۱۳ الحیات و معارف اسلامی ---------- آیت اللہ جعفر سبحانی

-۱۴ اسرار آل محمد ---------- سلیم بن قیس

-۱۵ امامت و رہبری ---------- علامہ شہید مرتضیٰ مطہری

-۱۶ مصباح المحدین ---------- عباس علی وحیدی منفرد

-۱۷ شبہائے پشاور ---------- سلطان الواعظین شیرازی

-۱۸ چکیدہ اندیشہ ہا ---------- سید یحییٰ برقعی

-۱۹ سید الشہداء ---------- آیت اللہ شہید دستغیب

۲۵۴

-۲۰ علی ، معیار کمال ---------- ڈاکٹر رجب علی مظلومی

-۲۱ داستان غدیر ---------- جمیع از دبیران

-۲۲ بررسی مسائل کلی امامت ---------- آیت اللہ ابراہیم امینی

-۲۳ فاطمة الزہرا ---------- گفتار مرحوم علامہ امینی

-۲۴ علی و پیامبران ---------- حکیم سید محمود سیالکوٹی

-۲۵ چراشیعہ شدم؟ ---------- شیخ محمد رازی

-۲۶ بوستان معرفت ---------- سید ہاشم حسینی تہرانی

-۲۷ قصہ ہائے قرآن ---------- سید ابوتراب صفائیی

-۲۸ مباحثی در معارف اسلامی ---------- علامہ فقیدسید علی بہبہانی

-۲۹ ادبیات و تعہد دراسلام ---------- محمد رضا حکیمی

-۳۰ علی کیست؟ ---------- فضل اللہ کمپانی

-۳۱ ہشتادودوپرسش ---------- آیت اللہ شہید دستغیب

-۳۲ حق با علی است ---------- مہدی فقیہ ایمانی

-۳۳ زندگانی فاطمة الزہرا ---------- آیت اللہ شہید دستغیب

-۳۴ گنجینہ ہائے شعر و ادب فارسی ---------- مصطفی ہادوی

-۳۵ این است آئین ما ---------- مرحوم کاشف الغطاء

-۳۶ باب حادی عشر ---------- مرحوم علامہ شہرستانی

۲۵۵

-۳۷ فرہنگ بزگان ایران و اسلام ---------- آذر تفضلی۔ مہین فضائلی جوان

-۳۸ النورالمشتعل ---------- تعلیق وشرح شیخ باقر محمودی

-۳۹ صلح امام حسن ---------- شیخ رازی آل یاسین

-۴۰ تجرید الاعتقاد ---------- خواجہ نصیر الدین طوسی

-۴۱ تفسیر نورالثقلین ---------- مرحوم عبد علی بن جمة الحویزی

-۴۲ آ نگاہ ہدایت شدم ---------- ڈاکٹر سید محمدتیجانی سماوی

-۴۳ ای اشک ہابریزید ---------- دیوان حبیب اللہ چائچیان

دیگر متفرق کتب

-۱ امام علی ،مشعلی و دژی ---------- سلیمان کتانی،ترجمہ جلال الدین فارسی۔

-۲ امام علی صدائے عدالت انسانی ---------- جرج جرداق

-۳ الفتوح ---------- ابومحمد احمد بن علی اعثم کوفی

-۴ محاضرات ---------- راغب اصفہانی

۲۵۶

کتب لغت

-۱ المنجد

-۲ فرہنگ جامع

-۳ منجد الطلاب

-۴ مجمع البحرین

-۵ فرہنگ معین(شش جلدی)

-۶ فرہنگ عمید

۲۵۷

فہرست

پیش لفظ ۴

علی اور دیگر آئمہ معصومین کی معرفت کیونکر ضروری ہے؟ ۴

امام کی خدمت میں ایک حقیر تحفہ ۴

معاشرے میں صالح حکومت اور مخلص رہبر کی ضرورت ۵

انسانوں کی حکومت بنانے کی کوششیں ۵

حکومت اسلامی کی قابل توجہ خصوصیات ۶

پیغمبر اسلام کے بعد رہبری جامعہ اسلامی میں اختلاف بین المسلمین پر ایک نظر ۸

آج ضرورت وقت کیا ہے؟ ۱۰

کچھ اس کتاب کے بارے میں ۱۰

پہلا باب بحث عقلی ۱۲

عقلی دلائل پر توجہ دینے کی ضرورت ۱۲

مسئلہ امامت پر بحث کی ضرورت ۱۳

انتخاب امام پر سنی اور شیعہ حضرات کا نظریہ ۱۴

انتخاب امام کیلئے علمائے اہل سنت کا نقطہ نظر ۱۴

انتخاب امام کیلئے شیعہ علماء کا نقطہ نظر ۱۴

خدا کی حکمت اور لطف و کرم کا تقاضا ۱۵

ہدایت الٰہی کی تعریف ۱۷

امام ہونے کی شرائط اہل سنت اور شیعہ حضرات کی نگاہ میں ۱۷

علمائے اہل سنت کی نگاہ میں شرائط امام ۱۷

علمائے شیعہ کی نگاہ میں شرائط امام ۱۸

۲۵۸

اہم شرائط امام کی تشریح ۱۹

عصمت و پاکدامنی ۱۹

پہلا راستہ ۲۰

عہد خدا ظالموں تک نہیں پہنچ سکتا ۲۰

دوسرا باب ۲۳

فضائل علی علیہ السلام قرآن کی نظر میں ۔ ۲ ۲۳

تصدیق فضیلت اہل سنت کی کتب سے ۲۴

دسویں آیت ۲۵

مودت اہل بیت کا ایک انداز ۲۵

قربیٰ سے مراد کون کونسے رشتہ دار ہیں؟ ۲۶

آل محمد کے بارے میں فخرالدین رازی کے نظریات ۲۸

تصدیق فضیلت اہل سنت کی کتب سے ۲۹

گیارہویں آیت ۳۰

علی نفس رسول ہیں(علی اور اہل بیت آیت مباہلہ میں) ۳۰

تصدیق فضیلت اہل سنت کی کتب سے ۳۳

بارہویں آیت ۳۴

اللہ تعالیٰ نے علی کو ایمان کامل اورعمل صالح کے سبب دلوں کا محبوب بنادیا۔ ۳۴

تصدیق فضیلت اہل سنت کی کتب سے ۳۵

تیرہویں آیت ۳۶

علی تنہا اس آیت کے حکم پر عمل کرنے والے ہیں ۳۶

تصدیق فضیلت اہل سنت کی کتب سے ۳۸

۲۵۹

چودہویں آیت ۳۸

علی اور اُن کے شیعہ بہترین مخلوق ہیں ۳۸

تصدیق فضیلت اہل سنت کی کتب سے ۴۱

پندرہویں آیت ۴۱

پیغمبر کی صداقت پر قرآن ایک روشن دلیل ہے اور علی ایک سچے گواہ ہیں ۴۱

فضائل علی علیہ السلام قرآن کی نظر میں ۔۳ ۴۲

تصدیق فضیلت اہل سنت کی کتب سے ۴۳

سولہویں آیت ۴۴

علی صدیق اکبر اورشہید فی سبیل اللہ ہیں ۴۴

تصدیق فضیلت اہل سنت کی کتب سے ۴۵

سترہویں آیت ۴۶

اللہ تعالیٰ نے علی کے وسیلہ سے پیغمبر کی مدد کی ۴۶

تصدیق فضیلت اہل سنت کی کتب سے ۴۷

اٹھارہویں آیت ۴۸

حضرت علی کا بغض اور دشمنی شقاوت قلب، نفاق اور انسان کی بدبختی کا باعث ہے ۴۸

تصدیق فضیلت اہل سنت کی کتب سے ۴۹

اُنیسویں آیت ۵۰

علی صالح المو منین ہیں ۵۰

تصدیق فضیلت اہل سنت کی کتب سے ۵۱

بیسویں آیت ۵۲

قیامت کے دن لوگوں سے ولایت علی کے بارے میں سوال کیا جائے گا ۵۲

۲۶۰