معارف قرآن

معارف قرآن0%

معارف قرآن مؤلف:
: سیدنسیم حیدر زیدی
زمرہ جات: مفاھیم قرآن
صفحے: 204

معارف قرآن

یہ کتاب برقی شکل میں نشرہوئی ہے اور شبکہ الامامین الحسنین (علیہما السلام) کے گروہ علمی کی نگرانی میں اس کی فنی طورپرتصحیح اور تنظیم ہوئی ہے

مؤلف: سید حمید علم الھدی
: سیدنسیم حیدر زیدی
زمرہ جات: صفحے: 204
مشاہدے: 74898
ڈاؤنلوڈ: 1124

تبصرے:

معارف قرآن
کتاب کے اندر تلاش کریں
  • ابتداء
  • پچھلا
  • 204 /
  • اگلا
  • آخر
  •  
  • ڈاؤنلوڈ HTML
  • ڈاؤنلوڈ Word
  • ڈاؤنلوڈ PDF
  • مشاہدے: 74898 / ڈاؤنلوڈ: 1124
سائز سائز سائز
معارف قرآن

معارف قرآن

مؤلف:
اردو

یہ کتاب برقی شکل میں نشرہوئی ہے اور شبکہ الامامین الحسنین (علیہما السلام) کے گروہ علمی کی نگرانی میں اس کی فنی طورپرتصحیح اور تنظیم ہوئی ہے

(7)انفاق کرنے والا

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا أَنْفِقُوا مِمَّا رَزَقْنٰا کُمْ مِنْ قَبْلِ أَنْ یَأتِی یَوْم لَا بَیع فِیْهِ وَلَا خُلَّة وَلَا شَفَاعَة--- (بقره ٢٥٤)

ترجمہ:

اے ایمان والو جو تمھیں رزق دیا گیاہے، اس میں سے راہ خد میں خرچ کرو قبل اس کے کہ وہ دن آجائے جس دن نہ تجارت ہوگی نہ دوستی کام آئے گی اور نہ سفارش۔

پیغام:

خدا اور قیامت پر ایمان تمام امور خیریہ من جملہ انفاق کا پیش خیمہ ہے۔

حضرت علی ـسے مروی ہے کہ دنیا دوستان خدا کے لیے تجارت کی جگہ ہے جہاں وہ انفاق اور اعمال خیر کے ذریعہ اپنی آخرت کو آباد کرتے ہیں لیکن دوسرے افراد دنیا کوصرف دنیا کے لیے چاہتے ہیں۔

(8) پرہیز گار

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا اِصْبِرُوا وَصٰابِروا وَ رَابِطُوا واتَّقُواللّٰهَ لَعَلّکُم تُفْلِحُونَ- (آل عمران ٢٠٠)

۱۸۱

ترجمہ:

اے ایمان والو صبر کرو ، صبر کی تعلیم دو، جہاد کیلئے تیاری کرو اور اللہ سے ڈرو شاید تم فلاح یافتہ اور کامیاب ہوجاؤ۔

پیغام:

امام صادق ـ سے روایت ہے کہ واجبات الٰہی کے پابند رہو، مشکلات کے سامنے صبر واستقامت سے کام لو اور اپنے پیشوا کا دفاع کرو۔

(9)صابر

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا استَعِینُوا بِالصَّبْرِ وَالصَّلٰوة انَّ اللّٰهَ مَعَ الصَّابِرِیْنَ-(بقره ١٥٣)

ترجمہ:

اے ایمان والو! صبر اور نماز کے ذریعہ مدد مانگو کہ خد صبر کرنے والوں کے ساتھ ہے۔

پیغام:

نماز خدا سے رابطہ کا بہترین وسیلہ ہے۔ صبر مشکلات پر قابو پانے کا نام ہے۔ گناہ پر صبر تقوے الٰہی ہے ، شہوت پر صبر پاکدامنی ہے، مصیبت پر صبر اطمینان اور سکون پر دلیل ہے، خدا صابرین کے ساتھ ہے خدا نیک افراد کے ساتھ ہے، خدا صاحبان تقویٰ کے ساتھ ہے، یعنی اُن سے خاص محبت کرتاہے۔

۱۸۲

(10)عدالت خواہاں

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا کُونُوا قَوَامِیْنَ بِالقِسْط شُهدائَ لِلّٰهِ وََلَوْ علی أَنْفسِکُمْ أَوِالْوٰالِدَیْن وَالْأَقْرَبِیْنَ اَن یّکُن غَنَیًّا أَوْ فَقِیرًا فَاللّٰهِ اوُلٰی بِهِمٰا- (نساء ١٣٥)

ترجمہ:

اے ایمان والو! عدل و انصاف کے ساتھ قیام کرو اور اللہ کے لیے گواہ بنو چاہے اپنی ذات یا اپنے والدین اور اقربا ہی کی خلاف کیوں نہ ہو جس کے لیے گواہی دینا ہے وہ غنی ہو یا فقیرخدا تو (تمھارے ساتھ) ان پر زیادہ مہربان ہے۔

پیغام:

انسان کو ہمیشہ اپنی ذات اور اپنے عزیز و اقارب کے مفادات کو نظر انداز کرتے ہوئے، زندگی کے ہر شعبہ میں عدل و انصاف سے کام لینا چاہیے ، انبیاء کرام کے آنے کا مقصد عدل و انصاف کو معاشرہ میں قائم کرنا تھا، سورہ مائدہ کی آٹھویں آیت میں اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ دشمن کے بارے میں بھی عدل و انصاف سے کام لینا چاہیے۔

امام علی ـ سے منقول ہے کہ خداوندعالم نے زمین و آسمان کو پایہ عدالت پر استوار کیا ہے۔

۱۸۳

(11) یاد رکھنے والا

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا اذکُروا نِعْمَة اللّٰهَ عَلَیْکُمْ اِذ جٰا ئَ تْکُمُ جُنُود فَأَرْسَلْنٰا عَلَیْهِمْ رِیْحًا وَ جُنُودًا لَمْ تَروهٰا وَکَاْنَ اللّٰهُ بِمٰا تَعْمَلُونَ بَصِیْرا - (احزاب ٩)

ترجمہ:

اے ایمان والو! اللہ کی اُس نعمت کو یاد کرو جب کفر کے لشکر تمھارے سامنے آگئے اور ہم نے ان کے خلاف تمھاری مدد کے لیے تیز ہوا اور ایسے لشکر بھیج دیئے جن کو تم نے دیکھا بھی نہیں تھا اور اللہ تمھارے اعمال کو خوب دیکھنے والا ہے۔

پیغام:

یہ آیت جنگ احزاب (جنگ خندق 5 ہجری) میں نازل ہوئی، یہ قانون الٰہی ہے کہ اگر ہم خدا کا ساتھ دیں تو وہ بھی ہماری نصرت و امداد کریگا، خدا کی ایک عظیم نعمت یہ ہے کہ اُس نے ہمیشہ اسلام اور اُمت مسلمہ کی حمایت کی ہے۔

(12)خبر فاسق کی تحقیق

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا اِنْ جٰاء کُمْ فٰاسِق بِنَبَائٍ فَتَبَیِّنُوا أَنْ تُصِیْبُوا قَوْمًا بِجَهٰالَةٍ فَتُصْبَحُوا عَلٰی فَعَلْتُمْ نٰادِمِیْنَ- (حجرات ٦)

۱۸۴

ترجمہ:

ایمان والو اگر فاسق کوئی خبر لے کر آئے تو اس کی تحقیق کرو ایسا نہ ہو کہ کسی قوم تک ناواقفیت میں پہنچ جاؤ اور اس کے بعد اپنے اقدام پر شرمندہ ہونا پڑے۔

پیغام:

جو شخص خدا کا مطیع و فرمانبردار نہ ہو وہ فاسق ہے، خدا کے اس دستور کی اہمیت کا اندازہ آج کے دور میں زیادہ سے زیادہ لگایا جاسکتا ہے جبکہ زیادہ تر نشر واشاعت اور روابط کے امور کی انجام دہی مستکبرین اور منافقین کے ہاتھ میں ہی ہے۔

(13) مذاق نہ اڑانے والا

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا لَا یَسْخَرْ قَوْم مِنْ قومً--- وَلَا تَنَابَروا بَالْأَلْقٰابِ---(حجرات ١١)

ترجمہ:

ایمان والو خبردار کوئی قوم دوسری قوم کا مذاق نہ اڑاے۔۔۔ اور آپس میں ایک دوسرے کو برے برے القاب سے بھی یاد نہ کرنا۔

پیغام:

قرآن کی بہت سی آیات معاشرتی آداب کو بیان کرتی ہیں، خداوند عالم چاہتا ہے کہ تمام مسلمان آپس میں اتحاد اور پیار ومحبت سے زندگی گزاریں، اس آیت میں اور اسی طرح دوسری آیات میں ان عوامل اور اسباب سے جو تفرقہ اور جدائی کا باعث بنتے ہیں ، روکا ہے۔

۱۸۵

(14) اپنا محاسبہ کرنے والا

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا اتقواللّٰهَ وَلِتُنظُر نَفس ما قَدَّمَت لِغَدٍ وَاتَّقوا للّٰهُ خَبِیْر بِمٰا تَعْمَلُوْن-(حشر ١٨)

ترجمہ:

ایمان والو اللہ سے ڈرو اور ہر شخص یہ دیکھے کہ اس نے کل کے لیے کیا بھیجا ہے، اور اللہ سے ڈرتے رہو کہ وہ یقینا تمھارے اعمال سے باخبر ہے۔

پیغام:

تقوے کے دومرحلے ہیں، پہلا مرحلہ یہ ہے کہ انسان نیک کام انجام دے اور بُرے کاموں سے پرہیز کرے، اور دوسرا مرحلہ یہ ہے کہ انجام شدہ کاموں پر تجدید نظر کرے۔

(15) مغضوب سے دوستی نہ کرنا

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا لَا تَتَولَّوا قَوْمًا غَضِبَ اللّٰهُ عَلَیْهِمْ قَدْ یَئِسوا مِنَ الاٰخِرَةِ کَمٰا یَئِسَ الکُفَّارُ مِنَ أَصْحٰابِ القُبُور- (ممتحنه ١٣)

۱۸۶

ترجمہ:

ایمان والو خبردار اُس قوم سے ہرگز دوستی نہ کرنا جس پر خدا نے غضب نازل کیا ہے کہ وہ آخرت سے اسی طرح مایوس ہونگے جس طرح کفار قبر والوں سے مایوس ہوجاتے ہیں۔

پیغام:

جو لوگ روز آخرت پر یقین نہیں رکھتے اُن پر اعتماد نہیں کیا جاسکتا ہے۔

پیغمبر اسلام (ص)سے منقول ہے جو شخص کسی قوم کی شبیہ بن جائے اس کا طور طریقہ اور چال چلن اپنالے تو اُسی قوم میں شمار کیا جائے گا۔

ہر قوم و ملت سے دوستی کے چند مرحلے ہیں:

اپنی جان اور مال سے ان کی مدد کرنا، ان کی روز بروز ترقی کا طلب گار ہونا، ان کی عادات کی پیروی کرنا۔

(16) جو کہو اُس پر عمل کرو

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا لِمَ تَقُولُونَ مٰا لَا تَفْعَلُونَ - کَبُرَ مقتًا عِنْداللّٰهِ ان تَقُولُوا مٰا لَا تَفْعَلُونْ-(صف ٢،٣)

ترجمہ:

ایمان والو آخر وہ بات کیوں کہتے ہو جس پر عمل نہیں کرتے، اللہ کے نزدیک یہ سخت ناراضگی کا سبب ہے کہ تم وہ کہو جس پر عمل نہیں کرتے ہو۔

۱۸۷

پیغام:

خدا اُس سے ناراض ہوتا ہے جس کے قول اور فعل میں تضاد ہو۔

رسالت مآب (ص) سے منقول ہے کہ ایمان محض دعوے اور آرزو کا نام نہیں ہے۔ بلکہ ایمان یہ ہے کہ دل میں خالص موجود ہو اور عمل اُس کی تائید کرے۔

امام صادق ـ سے مروی ہے کہ حقیقی ایمان کی علامت یہ ہے کہ انسان حق کو جو ظاہری طور پر اس کے لیے نقصان دہ ہے اُس باطل پر ترجیح دے جو ظاہری طور پر اس کے لیے سود مند ہے۔

(17) متقی اور مجاہد

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا هَلْ أَدُّلْکُمْ عَلٰی تجارةٍ تُنْجِیْکُمْ مِنْ عَذابٍ أَلِیْم تومنون باللّه وَ رَسُوْلِهِ وَتُجٰاهِدُونَ فِیْ سَبِیْلِ اللّٰهِ بِأَمْوالِ کُمْ وَ أَنْفُسِکُمْ ذٰالِکُمْ خَیْر لَکُمْ اِنْ کُنْتُم تَعْلَمُونَ-(صف ١٠،١١)

ترجمہ:

اے ایمان والو کیا میں تمھیں ایک ایسی تجارت کی طرف رہنمائی کروں جو تمھیں دردناک عذاب سے بچالے، اللہ اور اس کے رسول پر ایمان لے آؤ اور راہ خدا میں اپنے جان و مال سے جہاد کرو یہی تمھارے حق میں سب سے بہتر ہے اگر تم جاننے والے ہو۔

پیغام:

ہر معاملہ میں نفع اور نقصان کا احتمال ہوتا ہے ، لیکن اگر خدا سے معاملہ کیا جائے تو صرف نفع ہی نفع ہے، اور نفع بھی ایسا جو خدا کے مقام و منصب کے مناسب ہو۔

۱۸۸

(18)ذکر خدا میں تعجیل

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا اِذَا نُودیَ لِلصَّلوٰةِ مِنْ یَوْمِ الجُمْعَةِ فَاسْعُوا اِلٰی ذِکْرِاللّٰهِ ----(جمعه ٩)

ترجمہ:

اے ایمان والو جب تمھیں جمعہ کے دن نماز کے لیے پکارا جائے تو ذکر خدا کی طرف دوڑو۔۔۔

پیغام:

پیغمبر اسلام (ص) سے منقول ہے کہ نماز جمعہ فقراء و مساکین کے لیے حج ہے۔

ایک اور روایت میں آنحضرت (ص) سے مروی ہے کہ اگر کوئی شخص جمعہ کے دن نماز جمعہ بجالاتا ہے تو اُسے خدا کی بارگاہ سے قبول شدہ حج کا ثواب ملتا ہے اورجب نماز عصر بجالاتا ہے تو پھر عمرہ کا ثواب ملتاہے۔

(19)دشمن خدا سے بیزار

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا لَا تَتَّخِذوا عَدُّوِی وعَدُّوُکُمْ أَوْلِیٰائَ تُلْقُونَ اِلَیْهِمْ بِالمَودَّةِ و قَدْ کَفَروا بِمٰا جَائَ کُمْ مِنَ الحَقَّ--- (ممتحنه ١٠)

۱۸۹

ترجمہ:

ایمان والو خبردار میرے اور اپنے دشمنوں کو دوست مت بنانا کہ تم ان کی طرف دوستی کی پیش کش کرو جبکہ انھوں نے اس حق کا انکار کردیا ہے جو تمہارے پاس آچکا ہے۔

پیغام:

جو شخص خدا پر ایمان رکھتا ہے وہ کفّار کے سامنے ذلت کو برداشت نہیں کرتا یہی وجہ ہے کہ خدا اور رسول کے دشمن مومن سے دشمنی رکھتے ہیں۔

اسلام میں دشمن شناسی ایک بنیادی حیثیت رکھتی ہے۔

طاغوتی طاقتیں مختلف حربوں کے ذریعہ اپنے آپ کو حقوق بشر، آزادی اور امن وامنیت کا علمبردار کہہ کر اپنے ناپاک جرائم پر پردہ ڈالنے کی کوشش کرتی رہتی ہیں۔

(20)خدا کا مددگار

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا اِن تَنْصُرو اللّٰهَ یَنْصُرْکُمْ ویُثبِّتْ أَقْدَامَکُمْ- وَالَّذِیْنَ کَفَرُوا فَتَعساً لَّهُمْ وَ أَضَل أَعْمٰالَهُمْ- (محمد ٧،٨)

ترجمہ:

ایمان والو اگر تم اللہ کی مدد کروگے تو اللہ بھی تمھاری مدد کرے گا ، اور تمھیں ثابت قدم بنادے گا، اور جن لوگوں کفر اختیار کیا ان کے واسطے ڈگمگاہٹ ہے اور ان کے اعمال برباد ہیں۔

۱۹۰

پیغام:

جو لوگ کفر اختیار کرتے ہیں وہ لوگ ہلاک ہوجاتے ہیں اور ان کے اعمال تباہ و برباد ہوجاتے ہیں ، اس میں کوئی شخص نہیں ہے کہ خدا نے صاحبان ایمان سے نصرت کا وعدہ کیا ہے اور ان کی مدد بھی کرتا ہے، لیکن یہ سب اس بات پر مشروط ہے کہ بندہ خدا کی مدد کرے، تو خدا بھی بندے کی مدد کریگا، بندہ خدا کا ذکر کرے تو خدا بھی بندے کا ذکر کرے گا، بندہ خدا کا شکر کرے تو خدا نعمتوں میں اضافہ کرے گا۔

حق کو نابود کرنے کے لیے کفار کی کوششوں کی مثال ایسی ہی ہے جیسے کوئی چاہے کہ اپنے منہ سے نور خورشید کو بجھادے۔

(21)توبہ کرنے والا

یٰاایّها الَّذِیْنَ أَمَنُوا تُوبُوا اِلٰی اللّٰهِ تَوْبَةً نَصُوحًا----(تحریم ٨)

ترجمہ:

ایمان والو خلوص دل کے ساتھ توبہ کرو۔

پیغام:

امام صادق علیہ السلام سے منقول ہے : توبہ نصوح سے مراد ہے کہ دل بھی اُسی طرح توبہ کرے جیسے اس کا ظاہر توبہ کررہا ہے۔ رسالت مآب (ص) سے روایت ہے کہ توبہ کرنے والا ایسا ہے جیسے اُس نے گناہ ہی نہیں کیا۔

ایک اور مقام پر پیغمبر اسلام (ص)سے مروی ہے کہ خدا کے نزدیک محبوب ترین شخص توبہ کرنے والا مرد یا عورت ہے۔

تمّت بالخیر۔ نسیم حیدر زیدی

1427 ھ ق

۱۹۱

فہرست

آغازسخن 3

پہلی فصل(قرآن) 4

(ا) قرآن کا مثل نہیں لاسکتے 5

خالق اور مخلوق کا کیا مقابلہ۔ 5

(2) دس سورے لے آؤ 5

(3) ایک سورہ لے آؤ 6

(4) تد بّر کرو 7

(5) تلاوت سے پہلے 7

(6) غور سے سنو 8

(7) مجسمہ ہدایت 9

(8) نور کی طرف دعوت 9

(9) قرآن کی عظمت 10

(10) قرآن کی تلاوت 11

(11) پیغمبر اسلام کی فریاد 11

(12) کمالِ رحمت 12

(13) پہاڑ کا ٹکڑے ٹکڑے ہوجانا 13

(14) قرآن کی دلوں پر تأثیر 13

(15) کفار کی بہانہ جوئی 14

(16) حفاظت الٰھی 15

(17) بابرکت کتاب 15

۱۹۲

(18) حجاب 16

(19)رحمت اور بشارت 17

(20) صاحبان تقویٰ کیلئے ہدایت 17

(21) تصدیق کرنے والی 18

دوسری فصل(اہل بیت(علیھم السلام) 19

(1) ریسمان الٰہی 20

(2) کمال د ین اور اتمام نعمت 20

(3) ولایت 21

(4) تکمیل رسالت 22

(5) صادقین 23

(6) ایثار کا نمونہ 24

(7) برائی سے دوری 24

(8) خوشنودی خدا 25

(9) انفاق 26

(10) پیغمبر(ص) کے مددگار 27

(11) اطاعت 27

(12) مودَّت اہل بیت 28

(13) بہترین خلائق 29

(14) محبوب خدا 29

(15) علم و حکمت کے پیکر اتم 30

(16) خیر کثیر 31

۱۹۳

(17) ھادی 31

(18) صراط مستقیم 32

(19) حقِ طہارت 33

(20) نور الھی 34

(21)جناب ابراہیم امیر المومنین کے شیعہ 35

تیسری فصل(امام زمان عج) 36

(1) مومنین کی خوشی اور مسر ت کا دن 37

(2) امام زمانہ علیہ السلام کے ساتھی 37

(3) آئمہ کی معرفت 38

(4) حق کی کامیابی کا دن 39

(5) دین حق 39

(6) اہل زمین کا دوبارہ زندہ ہونا 40

(7) نورِ الٰہی 40

(8) امام زمانہ علیہ السلام 41

(9)اللّٰہ کا گروہ 42

(10) پیغمبر صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے جانشین 42

(11) کافروں کی سزا 43

(12) أَولیٰاء خدا 44

(13) وعدہ الٰہی 44

(14) ظالموں کا انجام 45

(15) زمین کے وارث 46

۱۹۴

(16) لوگوں کے پیشوا 46

(17) نماز کا قیام 47

(18)ذخیرہ الٰہی 48

(19) صالحین کی حکومت 48

(20)امام برحق 49

(21) زمین کا جگمگانا 50

چوتھی فصل(دعا) 51

(1) د نیا اور آخرت میں سعادت کی دعا 52

(2) اپنے اور اپنی اولاد کے حق میں دعا 52

(3) ثابت قدمی کے لئے دعا 53

(4)توبہ کیلئے دعا 54

(5) مومنین کی بخشش کیلئے دعا 55

(6) ہر کام کی اچھی ابتداء اور انتہا کے لئے دعا 56

(7) کافروں پر کامیابی کے لئے دعا 56

(8) صبر و استقامت کیلئے دعا 57

(9) متقیوں اور پرہیز گاروں کے پیشوا ہونے کی دعا 58

(10) طلب رحمت کے لئے دعا 59

(11) مغفرت کیلئے دعا 59

(12) نور ہدایت کی تکمیل کیلئے دعا 60

(13) صبر و تحمل کیلئے دعا 61

(14) ظالموں سے بیزاری کیلئے دعا 62

۱۹۵

(15)شرح صدر کے لئے دعا 62

(16) شکر گذاری کیلئے دعا 63

(17) فرزند صالح کے لئے دعا 64

(18) مومنین کے لئے طلب رحمت کی دعا 65

(19) ثابت قدمی اور کفار پر کامیابی کی دعا 65

(20) صالحین کے ساتھ ملحق ہونے کی دعا 66

(21) نیک افراد کے ساتھ محشور ہونے کی دعا 67

پانچویں فصل(علم) 68

(1) قلم علامت علم 69

(2) تربیت اور تعلیم 69

(3) وہ علم جس کے انبیاء معلم ہیں 70

(4)اسماء حسنی کی تعلیم 71

(5) باعث افتخار 71

(6) ثمر علم 72

(7) قدرت علم 73

(8) مقام و منصب کی شرط 73

(9) وسیلہ امتحان 74

(10) کمال سے روکنے والا 75

(11)ذرائع علم 75

(12) صاحبان علم ہی صاحبا عقل ہیں 76

(13) نقصان دہ علم 77

۱۹۶

(14) سؤال 78

(15) راسخون فی العلم 78

(16) جاننے والے اور نہ جاننے والے 79

(17) عالم بے عمل 80

(18) علم و قدرت خدمت انسان میں 81

(19) معلم بزرگ 81

(20) علم اور تقویٰ 82

(21)خیر فراوان 83

چھٹی فصل(اسرار کائنات) 84

(1) خاک سے پیدائش 85

(2) جَنِین کے مراحل 85

(3) تاریکی میں خلقت 86

(4) بڑھاپا 87

(5) کشش ثِقل 88

(6) زمین کی گردش 89

(7) وسعت آسمان 89

(8) سیاروں کی خلقت 90

(9)سبز درخت سے آگ 91

(10) پہاڑوں کی حرکت 91

(11) پہاڑ 92

(12) ہر چیز کا جوڑا 93

۱۹۷

(13) ستون آسمان 93

(14) گول زمین 94

(15) پانی سے خلقت 95

(16) درختوں میں نظام زوجیّت 95

(17) سورج کی گردش 96

(18)حیوانات کی گفتگو 97

(19) زمیں کے اردگرد کی فضائ 97

(20) پودوں میں عمل لقاح 98

(21) سورج کا تاریک ہونا 99

ساتویں فصل(غور وفکر) 100

(1) بہترین انتخاب 101

(2) صاحبان علم اور صاحبان عقل 102

(3) کم عقل لوگ خدا کے نزدیک 102

(4)صاحبان معرفت 103

(5) غورو فکر کی دعوت 104

(6) غور و فکر کا مقام (1) 104

(7)غور و فکر کا مقام (2) 105

(8) غور و فکر کا مقام (3) 106

(9) غور و فکر کا مقام (4) 106

(10) غور و فکر کا مقام (5) 107

(11) غور و فکر کا مقام (6) 108

۱۹۸

(12)غور و فکر کا مقام (7) 108

(13) کم عقل لوگ حق کے دشمن 109

(14) دشمنان حق کا سر انجام 110

(15)کم عقلی پلیدگی و گندگی ہے 110

(16) کم عقلی کا نتیجہ 111

(17) کیا صاحبان عقل اور کم عقل مساوی ہیں 112

(18) معرفت اور آگاہی کے ساتھ 112

(19) وسوسہ شیطان 113

(20)میدان عمل 114

(21) کافروں کی کم عقلی 114

آٹھویں فصل(انسان) 116

(1) بہترین ساخت 117

(2)خود آگاہ 117

(3) خود فریبی 118

(4) آزاد 119

(5) فرشتوں کے مقابل 119

(6) خبردار 120

(7) نقطہ ضعف کامل 121

(8) امتحان 121

(9) مورد تنقید 122

(10) زندگی کے مراحل 123

۱۹۹

(11) اختیار 124

(12) انسان کا سوال 124

(13) غلط سوچ 125

(14) جانشین 125

(15)شیطان انسان کا دشمن 126

(16) امانت دار 127

(17) انسان ہوشیار ہوجاؤ 127

(18) کائنات انسان کے لیے 128

(19) تلاش و کوشش کا ہدف 129

(20) خطرہ سے ہوشیار 129

(21)نا شکری 130

نویں فصل(عورت) 131

(1) معنوی مساوات 132

(2) خلقت میں مساوات 132

(3) دورِ جاہلیت میں۔ 133

(4) معاشرتی مسائل میں 134

(5) حجاب میں 134

(6) مورد خطاب 135

(7) کافروں کے لئے مثال 136

(8) نمونہ عمل 137

(9) صاحبان ایمان کے لیے مثال 137

۲۰۰